2018 کی رہگزر پر قہقہوں اور سسکیوں کا ملا جلاسفر

سال 2018 اپنی تلخ و شیریں یادیں لئے ختم ہونے کے قریب ہے۔ اس سال ملک میںسیاست سے جڑے کون سے اہم واقعات ہوئے۔

 

سال 2018 کا آغاز قصور کی معصوم کلی  سے زیادتی اور بعدازاں اندوہناک قتل سے ہوا۔ معصوم پری کو 4 جنوری کو اغوا کیا گیا۔ سات جنوری کو اس کی لاش کچرا کنڈی سے ملی۔ اس وقت کی پنجاب حکومت کی گڈ گورننس کا سارا پول کھول دیا۔ 5 جنوری کو سینئر سیاستدان ائیر مارشل (ر) اصغر خان وفات پا گئے۔ 

31 مئی کو قومی اور صوبائی اسمبلیاں مدت پوری کرکے تحلیل ہوگئیں۔ یکم جون کو جسٹس (ر) ناصر الملک نے نگران وزیرِ اعظم کا حلف اٹھایا اور الیکشن کی تیاریاں زور پکڑ گئیں اور الیکشن مہم کا آغاز ہو گیا۔

 

6 جولائی کو نواز شریف، مریم نواز اور کیپٹن صفدر کو ایون فیلڈ ریفرنس میں سزا سنا دی گئی۔ بہر حال 8 جولائی کو کیپٹن صفدر نے ڈرامائی انداز میں گرفتاری دی۔ الیکشن مہم اس وقت خون آشام ہوگئی جب 10 جولائی کو اے این پی رہنما ہارون بلور کو شہید کر دیا گیا۔ 13 جولائی کو نواز شریف اور ان کی بیٹی لندن سے واپسی پر لاہور ائیر پورٹ پر دھر لیے گئے۔ ان کے استقبال کے لیے لیگی قیادت اور کارکنان ائیر پورٹ نہ پہنچ سکے۔

اسی روز مستونگ میں خود کش حملے ہوا جس میں بلوچستان عوامی پارٹی کے رہنما  سراج رئیسانی سمیت 128 افراد شہید ہو گئے۔ انتخابات سے صرف 3 دن قبل  22 جولائی کو پی ٹی آئی امیدوار اکرام اللہ گنڈہ پور خودکش حملے میں جان کی بازی ہار گئے۔ 25 جولائی کو عام انتخابات ہوئے اور پاکستان تحریکِ انصاف اکثریتی جماعت بن کر ابھری۔ 17 اگست کو عمران خان  وزیرِاعظم منتخب ہوئے اور 18 اگست کو عہدے کا حلف اٹھایا۔

 

11 ستمبر کو بیگم کلثوم نواز کینسر کے خلاف جنگ ہار کر داعی اجل کو لبیک کہہ گئیں۔ اسلام آباد ہائیکورٹ کے فیصلے کی روشنی میں 19 ستمبر کو نواز شریف، ان کی صاحبزادی اور داماد کو اڈیالہ جیل سے رہائی نصیب ہوئی۔ 5 اکتوبر کو شہباز شریف کو آشیانہء اقبال کیس میں نیب نے حراست میں لے لیا۔ بہر حال انہیں کئی بار پروڈکشن آرڈرزپر قومی اسمبلی اجلاس میں شرکت کے لیے پارلیمان لایا گیا۔ 23 اکتوبر کو وزیرِ اعظم عمران خان کی محنت رنگ لائی۔

وزیرِ اعظم کے دورہء سعودی عرب میں 6 ارب ڈالرز کا امدادی پیکج ملا۔ 5 نومبر کو وزیرِ اعظم عمران خان کے کامیاب دورہ چین میں دونوں ممالک مقامی کرنسی میں تجارت پر رضامند ہوئے، 18 نومبر کو وزیرِ اعظم نے متحدہ عرب امارات کا کامیاب دورہ کیا اور بہترین مالیاتی پیکج کا حصول ممکن ہوا۔

28 نومبر کو وزیرِ اعظم پاکستان نے کرتارپور راہداری کا سنگِ بنیاد رکھنے کا تاریخی اقدام کیا۔ 6 دسمبر کو وفاقی وزیرسائنس اینڈٹیکنالوجی اعظم سواتی عہدے سے مستعفی ہوگئے۔

11 دسمبر کو نیب نے  خواجہ سعد رفیق اور خواجہ سلمان رفیق  کو گرفتار کر لیا۔ 13 دسمبر کو حکومت  شہباز شریف کو چئیرمین پبلک اکاؤنٹس کمیٹی  بنانے پر راضی ہوگئی  اور 21 دسمبر کو ان کا باقاعدہ انتخاب کر لیا گیا۔ سال 2018 کے اختتام پر ملک ایک نوجوان، مدبر اور روشن خیال سیاستدان علی رضا عابدی سے محروم ہو گیا۔ انہیں 25 دسمبر کو شہید کر دیا گیا۔

حارث افضل  5 ماه پہلے

متعلقہ خبریں