لوگوں کو پی ایچ ڈی کرنے کے بعد بھی نوکریاں نہیں ملتیں: وفاقی وزیر تعلیم شفقت محمود

اسلام آباد (پبلک نیوز) وفاقی وزیر تعلیم شفقت محمود نے کہا ہے کہ 2 سے اڑھائی کروڑ بچے سکولوں سے باہر ہیں۔ کچھ بچوں نے بعد میں اسکول جانا چھوڑ دیا۔ ہمارے لیے یہ بہت بڑا چیلنج ہے۔

وفاقی وزیر تعلیم شفقت محمود کی پریس کا نفرنس کرتے ہونے کہنا تھا کہ آج سیاست سے ہٹ کر بات کریں گے۔ تمام صوبوں کی نمائندگی آج کے اجلاس میں موجود تھی۔ بہت سے معاملات میں صوبوں اور وفاق میں ہم آہنگی ہے۔ 2 سے اڑھائی کروڑ بچے سکولوں سے باہر ہیں۔ وہ بچے بھی اس میں شامل ہیں جو کبھی اسکول ہی نہیں گئے۔

ہمارے لیے یہ بہت بڑا چیلنج ہے۔ کچھ بچوں نے بعد میں اسکول جانا چھوڑ دیا۔ ملک میں اس وقت تین تعلیمی نصاب ہیں۔ ایک نصاب سرکاری اسکولوں میں پڑھایا جاتا ہے۔ کئی جگہوں پر اسٹینڈرڈ اچھا ہے کہیں جگہوں پر نہیں۔ وفاق المدارس کی تعلیم کا اپنا نصاب ہے۔ انگلش میڈیم سکولوں میں اپنا نصاب ہے۔ یکساں نظام تعلیم لانے کے لیے اجلاس میں غور کیا گیا۔

تعلیم کی کوالٹی بہتر کرنے پر اجلاس میں بات ہوئی۔ تعلیم کا لنکج جاب مارکیٹ سے بہت مختلف ہے۔ لوگوں کو پی ایچ ڈی کرنے کے بعد بھی نوکریاں نہیں ملتیں۔ وزیراعظم سے درخواست کریں گے تعلیمی رضاکار پروگرام لانچ کریں۔ رضاکارانہ طور پر لوگ تعلیم میں بہتری کے لیے کام کریں۔

بچیوں کی تعلیم اولین ترجیحات میں شامل ہے۔ یکساں نظام تعلیم کے لیے جلد وزیراعظم کو تجاویز دینے لگے ہیں۔ وزیراعظم کی ہدایت پر جلد ہی ایک نصاب کونسل تشکیل دی جائے گی۔

حارث افضل  9 ماه پہلے

متعلقہ خبریں