ادویات کی قیمتوں میں اضافہ، وزارت صحت نے جواب قومی اسمبلی میں جمع کرادیا

اسلام آباد(پبلک نیوز) وزارت صحت نے ادویات کی قیمتوں میں اضافے کی وجوہات قومی اسمبلی کو بتا دیں۔ وزارت صحت کا کہنا ہے کہ روپے کی قدر میں کمی۔ خام مال اور پیکنگ مواد کی قیمتوں میں اضافہ، اور بجلی اور گیس کی قیمتوں اضافہ دواوں کی قیمتوں میں اضافے کا سبب بنا۔

 

قومی اسمبلی کا اجلاس ڈپٹی اسپیکر قاسم خان سوری کی زیر صدارت جاری ہے، اجلاس کو وزارت صحت نے ادویات کی قیمتوں میں اضافے کی وجوہات بتا دیں۔ تحریری جواب میں وزارت صحت نے بتایا کہ ڈالر کے مقابلے روپے کی قدر میں 26 فیصد کمی اضافے کا باعث بنی۔ دواوں کے لیے خام مال اور پیکنگ مواد کی قیمتوں میں اضافہ ہوا اور اس کے علاوہ بجلی اور گیس کی قیمتوں اضافہ دواوں کی قیمتوں میں اضافے کا سبب بنا۔ تحریری جواب میں وزارت صحت کا کہنا ہے کہ پلانٹس بند ہونے کے سبب چین میں اے پی آئی کی قیمتوں میں اضافہ بھی سبب بنا۔ وزارت صحت سال 2016-17کے لیے صحت پر اخراجات جی ڈی پی کا 0.91 فیصد ریکارڈ کئے گئے۔ مالی سال 2015-16 کے لیے اخراجات 0.77 فیصد تھے۔


وزارت صحت کے مطابق روپے کے لحاظ سے مالی سال 2016-17 میں صحت پر اخراجات 291 ارب روپے رہے۔ مالی سال 2015-16 میں 226 ارب روپے تھے۔ عالمی ادارہ صحت کی سفارشات کے مطابق کل جی ڈی پی کا 4 فیصد صحت اخراجات پر مختص کیا جاتا ہے۔ وزارت صحت نے اپنے تحریری جواب میں بتایا کہ پاکستان میں اس وقت صحت پر 0.91 فیصد اخراجات کئے جارہے ہیں۔2019-20 کے پی ایس ڈی پی میں پہلے کی نسبت زیادہ رقم تجویز کی گئی ہے۔

عطاء سبحانی  3 ہفتے پہلے

متعلقہ خبریں