چودھری برادران کی مولانا فضل الرحمان سے ملاقات، معاملات حل کرنے پر مشاورت

پبلک نیوز: مولانا سے مذاکرات کا عمل بحال ہوگیا، چودھری برادران نے مولانا فضل الرحمان سے ان کی رہائشگاہ پر ملاقات کی۔ آزادی مارچ کے پلان بی پر بات چیت اور معاملات حل کرنے پر مشاورت ہوئی۔


حکومت اور جے یو آئی کے درمیان  ڈیڈلاک ختم کرنے کے لیے چودھری برادران پھر میدان میں آ گئے۔ مذاکراتی عمل پھر سے شروع ہو گیا۔ چودھری برادران نے مولانا فضل الرحمان سے اہم ملاقات کی۔ معاملہ افہام و تفہیم سے حل کرنے پر بات ہوئی۔

 

چودھری پرویز الٰہی نے پرامن دھرنے کی تعریف کی کہا واحد دھرنا تھا جس میں ڈسپلن دیکھا، مولانا ہی اب پاکستان کے واحد اپوزیشن لیڈر ہیں۔ مولانا فضل الرحمان نے کہا وزیراعظم استعفی دے دیتے تو پورے ملک میں احتجاج نہ کیا جاتا۔ کارکنوں کو واضح ہدایت ہے کسی شہری کو تنگ نہ کیا جائے۔ عمران خان نے ایسی صورتحال پیدا کردی کہ کوئی اب وزیراعظم بننے کو تیار نہیں ہو گا۔

 

چودھری شجاعت حسین نے کہا زندگی موت اللہ کے ہاتھ میں ہے، نواز شریف کو باہر جانے دیا جائے۔ خدانخواستہ کچھ ہوا تو کلنک کا ٹیکا عمران خان کے ماتھے پر لگے گا۔

 

حکومت کے خلاف پلان بی پر عمل درآمد شروع ہو چکا ہے، مولانا کی ہدایت جے یو آئی ف کے کارکنوں نے اہم شاہراہیں بند کرنا شروع کر دیں۔ تاہم آج کی یہ ملاقات اس حوالے سے خوش آئند ہے کہ مذاکرات کا رکا ہوا عمل ایک بار پھر سے بحال ہو گیا۔

احمد علی کیف  3 ہفتے پہلے

متعلقہ خبریں