منی لانڈرنگ کیس میں نیب نے شریف فیملی کیخلاف مزید شواہد حاصل کر لیے

لاہور(شاکر محمود اعوان) نیب نے حمزہ شہباز، سلمان شہباز، نصرت شہباز کو برطانیہ سے کون اور کیسے رقم منتقل کرتا ہے، نیب نے تفصیلات حاصل کر لیں۔ نیب ذرائع کے مطابق حمزہ شہباز، سلمان شہباز اور فیملی کو برطانیہ کے 3 بنکس اور 7 منی ایکسچینج سے رقم منتقل ہوتی رہی۔

 

نیب نے شہباز شریف اینڈ فیملی منی لانڈرنگ کیس میں مزید شواہد حاصل کر لیے ہیں۔ نیب نے برطانیہ سے لاکھوں ڈالرز منتقل کرنے والے افراد، بنکس او منی ایکسچینج کا ڈیٹا حآصل کر لیا ہے۔ شریف فیملی کو بارکلے بنک، ایچ ایس بی سی بنک اور ٹی ٹی ٹی کارپوریشن سے پیسے بھیجے جاتے رہے، جبکہ منی ایکسچینج میں برطانیہ کی کریم منی ایکسچینج، ورلڈ کرنسی، ایف ایکس کرنسی کروس بار ایف ایکس، میاں انٹرنیشنل، والڑایکس اور کے، ایس منی ٹرانسفر لمیٹیڈ سے پیسے منتقل ہوتے رہے۔

 

ذرائع کے مطابق نیب نے تمام منی ایکسچینج اور بنک کے ذریعے، بھیجے گئے سوفٹ میسجز کی تفصیلات بھی حاصل کر لی ہیں۔ شہباز شریف اینڈ فیملی کو 10 کمپنیوں سے 37 کروڑ کے بھجیے گیے۔ ڈیمانڈ ڈرافٹ بھی حاصل کر لیے گئے ہیں۔ سلمان شہباز کی جعلی کمپنی وقار ٹریڈنگ کے اکاؤنٹ میں بیرون ملک 2 لاکھ 50 ہزار امریکی ڈالر منتقل ہونے کے بھی شواہد نیب کو موصول ہو چکے ہیں جبکہ نیب نے ایم ایس مقصود کمپنی سے متعلق بھی حیران کن تفصیلات اکٹھی کر لی ہیں۔

 

ذرائع کا کہنا ہے کہ مقصود اینڈ کمپنی سے بھی شریف فیملی کے اکاونٹس میں اربوں روپے منتقل ہونے کے شواہد مل چکے ہے۔ نیب ذرائع کا کہنا ہے کہ برطانیہ سے 21 لاکھ 76 ہزار 235 امریکن ڈالرز شریف فیملی کو منتقل ہونے کے دستاویزی شواہد بھی نیب کو موصول ہوچکے ہیں۔

عطاء سبحانی  5 ماه پہلے

متعلقہ خبریں