آف شور کمپنی کیس، نیب نے سینئر صوبائی وزیر عبدالعلیم خان کو گرفتار کر لیا

لاہور(پبلک نیوز) قومی احتساب بیورو (نیب) نے وزیر بلدیات پنجاب عبدالعلیم خان کو آف شور کمپنی کیس میں گرفتار کر لیا۔ سینئر وزیر نیب لاہور کو سوالوں کے جوابات تسلی بخش نہ دے سکے۔

 

ذرائع کے مطابق سینئر صوبائی وزیر عبدالعلیم خان آف شور کمپنی کیس میں نیب لاہور میں اپنے اسٹاف کے ہمراہ پیش ہوئے۔ جہاں سینئر وزیر عبدالعلیم خان نے نیب کے سوالوں کے جوابات دیئے مگر انہیں تسلی بخش جواب نہ دینے کے باعث نیب کی جانب سے انہیں حراست میں لے لیا اور بعد میں گرفتار کر لیا گیا۔ سینئر سیاسی رہنماء کا سٹاف جو کہ نیب آفس کے باہر انتظار کر رہا تھا، گرفتاری کے بعد واپس روانہ ہو گیا۔

 

ذرائع کے مطابق عبدالعلیم خان نے سینئر وزیر کے عہدے سے استعفیٰ دے دیا، عبدالعلیم خان نے نیب کی جانب سے حراست میں لیے جانے کے بعد اپنا استعفیٰ وزیراعلیٰ کو بھجوایا۔ عبدالعلیم خان نے کہا کہ مقدمے میں گرفتاری کے باعث سینئر وزیر کے عہدے سے مستعفیٰ ہو رہا ہوں۔ اپنے خلاف کیس اور گرفتاری کا عدالت میں سامنا کروں گا۔ امید ہے عدالت سے انصاف ملے گا۔

 

واضح رہے احتساب بیورو (نیب لاہور) میں سینئر صوبائی وزیر علیم خان کیخلاف آف شور کمپنی اور آمدن سے زائد آثاثہ جات بنانے کے الزام پر تحقیقات جاری ہے اور سینئر وزیر اس سے پہلے نیب لاہور میں 3 بار پیش ہو چکے ہیں، علیم خان کو آخری مرتبہ 10 اگست 2018 کو طلب کیا گیا تھا اور آخری پیشی پر ایک سوالنامہ انہیں دیا گیا۔ نیب نے علیم خان کے ساتھ ان کی اہلیہ، والد اور والدہ کے اثاثوں کی بھی چھان بین شروع کررکھی ہے۔

عطاء سبحانی  1 ہفتے پہلے

متعلقہ خبریں