پیراگون سکینڈل میں گرفتار خواجہ برادران کے جسمانی ریمانڈ میں 14 روز کی توسیع

لاہور (شاکر محمود اعوان) احتساب عدالت نے پیراگون سکینڈل میں گرفتار سعد رفیق اور سلمان رفیق کے جسمانی ریمانڈ میں 14 روز کی توسیع کر دی۔ نیب تفتیشی افسر نے بتایا کہ خواجہ برادران کے نام پر بیس پلاٹس ہیں۔ دو ارب روپے سلمان رفیق اور ندیم ضیا کے بیٹوں کے نام پر ٹرانسفر کیے گئے۔ سعد رفیق نے کہا احتساب کے نام پر انتقام ہو رہا ہے، زیادہ دیر نہیں چلے گا۔ منی بجٹ مہنگائی کا طوفان لائے گا۔

تفصیلات کے مطابق پیراگون سکینڈل میں نیب کے زیرحراست خواجہ برادران کو ریمانڈ ختم ہونے پر احتساب عدالت پیش کیا گیا۔ نیب کے وکیل نے عدالت کو بتایا کہ پیراگون کا ریکارڈ حاصل کیا جس سے دو ارب روپے کی رقم غفران اور کبیر نامی شخص کو منقتل ہوئی۔

پراسیکیوٹر نے بتایا کہ غفران سلمان رفیق کے جبکہ کبیر ندیم ضیا کے بیٹے ہیں۔ تفتیشی افسر نے کمرہ عدالت میں پیراگون کا نقشہ پیش کیا اور عدالت کو خواجہ برادران کی ملکیتی زمین کے حوالے سے بتایا۔

تفتیشی افسر نے کہا کہ پیراگون سٹی کے 12 سے 13 اکاؤنٹس سے متعلق تفتیش ابھی جاری ہے، ہاؤسنگ سوسائٹی کے اکاؤنٹس مشکوک ٹرانزیکشنز ہوئیں جن کی تفتیش کے لیے خواجہ برادران کا مزید جسمانی ریمانڈ درکار ہے۔

خواجہ برادران کے وکیل امجد پرویز نے کہا کہ عدالت میں جتنی باتیں کی گئیں سب پرانی ہیں۔ اس بنیاد پر مزید جسمانی ریمانڈ نہیں دیا جا سکتا۔ عدالت نے دونوں جانب سے وکلا کے دلائل مکمل ہونے پر فیصلہ محفوظ کیا۔

میڈیا سے گفتگو میں سعد رفیق نے کہا کہ پہلے بھی خدمت کا صلہ جیلوں اور انتقام کی شکل میں دیا جاتا رہا ہے آج بھی دیا جا رہا ہے۔

احتساب عدالت نے محفوظ فیصلہ سناتے ہوئے خواجہ برادران کے جسمانی ریمانڈ میں 14 روز کی توسیع کر دی۔ نیب کو 19 جنوری کو خواجہ برادران کو دوبارہ پیش کرنے کا حکم دے دیا۔

احمد علی کیف  5 ماه پہلے

متعلقہ خبریں