نیب لاہور کا شہباز شریف کے تمام اثاثے منجمد کرنے کے احکامات

لاہور (پبلک نیوز) شہباز شریف فیملی کو ایک اور جھٹکا لگ گیا، نیب لاہور نے سابق وزیراعلی پنجاب ان کی اہلیہ اور بیٹوں کے تمام اثاثے منجمد کرنے کے احکامات جاری کر دیئے۔ منجمد ہونے والی جائیدادوں میں لاہور کی 96 ایچ ماڈل ٹاؤن، 86 ایچ ماڈل ٹاؤن رہائش گاہ بھی شامل ہے۔ ڈیفنس فیز 5 کے 2 پلاٹ،چنیوٹ میں 2 جائیدادیں منجمد ہوں گی۔

 

نیب نے شہبازشریف اور کی بیگمات اور بیٹوں کی مختلف مقامات پر موجود 23 جائیداد منجمد کر دیں۔ نوٹی فکیشن کے مطابق ان جائیدادوں میں ماڈل ٹاؤن 96 اور 87 ایچ کی دس کنال کی رہایشگاہیں بھی شامل ہیں۔

 

چنیوٹ میں دو مقامات پر 180 اور 209 کنال، ڈونگا گلی ایبٹ آباد میں نو کنال ایک مرلے کے نشاط لاجز بھی منجمد کرنے کی ہدایت کی گئی ہے۔ یہ جائیداد سابق وزیراعلی پنجاب کی اہلیہ نصرت شہباز کے نام پر ہے۔

 

ڈی ایچ اے فیز فائیو کے اے بلاک میں دس، دس مرلہ کے دو گھر اور پیر سوہاوا کے قریب بھی تین جائیدادیں سیل کرنے کا حکم دیا گیا ہے۔ یہ پراپرٹیز شہباز شریف کی اہلیہ تہمینہ درانی کے نام ہیں۔

 

حمزہ اور سلمان شہباز کے نام چنیوٹ میں واقع 182 کنال 7 مرلہ اور 209 کنال 4 مرلہ سے زائد کی دو جائیدادیں بھی منجمد کی گئی ہیں۔ حمزہ شہباز کے جوہر ٹاون لاہور میں پانچ پانچ مرلہ کے 9 پلاٹس، جوڈیشل کالونی میں ایک کنال سے زائد کے 4 پلاٹس بھی سیل کرنے کی ہدایت کر دی گئی۔

 

اثاثے منجمد کرنے کے احکامات ڈی جی نیب لاہور شہزاد سلیم کی جانب سے جاری کیے گئے۔ ڈی جی نیب کے مطابق شہباز شریف، حمزہ اور سلمان شہباز کے خلاف کرپشن کیسز میں ثبوت سامنے آنے پر ایکشن لیا گیا ہے، احتساب عدالت میں ریفرنس دائر ہونے تک اثاثہ جات منجمد رہیں گے۔

احمد علی کیف  4 روز پہلے

متعلقہ خبریں