نیب نے سابق وزیر ریلوے خواجہ سعد رفیق کی مشکلات میں مزید اضافہ کر دیا

لاہور(مستنصر عباس) سابق وفاقی وزیر ریلوے خواجہ سعد رفیق کی جیل جانے کے بعد بھی نیب سے جان نہ چھوٹ سکی، نیب نے ریلوے میں مہنگے داموں 55 لوکو موٹیوز انجن خریدنے کے معاملے پر سعد رفیق سے جیل میں تفتیش کا فیصلہ کر لیا۔

 

پیراگون اسکینڈل میں نیب کی گرفت میں آنے والے سابق وفاقی وزیر ریلوے خواجہ سعد رفیق کی مشکلا کم نہ ہو سکی، احتساب بیورو(نیب لاہور) نے جیل میں خواجہ سعد رفیق کا پیچھا کرنے کا فیصلہ کر لیا، سابق وزیر ریلوے خواجہ سعد رفیق کیخلاف 55 ریلوے لوکو موٹیو کی خریداری میں قومی خزانے کو اربوں روپے کا نقصان پہنچانے کے معاملے پر نیب نے ان سے جیل میں تفتیش کرنے کا فیصلہ کیا ہے اور اس سلسلے میں جلد احتساب عدالت میں ایک درخواست دائر کی جائے گی جس میں خواجہ سعد رفیق سے جیل میں تفتیش کے لیے اجازت طلب کی جائے گی۔

 

نیب زرائع کے مطابق خواجہ سعد رفیق نے بطور وزیر ریلوے 55 لوکوموٹیوز انجن مہنگے داموں خریدنے کی منظوری دی زرائع کے مطابق 55 میں سے صرف 10لوکوموٹو انجن استمعال میں ہیں جبکہ 45 لوکو موٹیو اضافی خریدے گئے اضافی لوکوموٹیوز خریدنے سے قومی خزانے کو اربوں روپے کا نقصان ہوا، جس کی تفتیش کے لیے خواجہ سعد رفیق سے جیل میں پوچھ گچھ کی جائے گی۔

 

واضع رہے کہ نیب نے سابق وفاقی وزیر ریلوے کو پیراگون اسکینڈل میں گرفتار کیا تھا۔ سعد رفیق 54 روز تک جسمانی ریمانڈ پر نیب کی حوالات میں رہنے کے بعد اب جوڈیشل ریمانڈ پر کیمپ جیل میں قید ہے جہاں نیب ان سے اب محکمہ ریلوے میں مبینہ کرپشن کی تحقیقات کرے گا۔

عطاء سبحانی  2 ماه پہلے

متعلقہ خبریں