نیب نے شہبازشریف کی مشکوک ٹرانزیکشن سمیت 3سال کا بنک ریکارڈ حاصل کرلیا

لاہور(پبلک نیوز) سابق وزیراعلی پنجاب شہباز شریف کی جانب سے 5 مشکوک بنک ٹرانزیکشن سمیت 3 سال کا ریکارڈ نیب لاہور نے حاصل کر لیا۔ 3 سال کے دوران 20 لاکھ سے زائد کی 21 ٹرانزیکشن کی گئیں۔

 

پبلک نیوز نے سابق وزیراعلی پنجاب شہباز شریف کی جانب سے کی جانے والی مشکوک ٹرانزیکشن سمیت 3 سال کا بنک ریکارڈ حاصل کرلیا۔ سابق وزیراعلی کی جانب سے نجی بنک کی مسلم ٹاؤن برانچ سے 3 سال کے دوران 21 بڑی ٹرانزیکشن کی گئی۔ سابق وزیراعلی کے اکاؤنٹ میں 3 سال کے دوران 10 کروڑ 28 لاکھ 72 ہزار روپے منتقل ہوئے جبکہ اس عرصہ کے دوران 9 کروڑ 26 لاکھ 71 ہزار 173 روپے نکالے گئے۔

 

شہباز شریف نے 1 کروڑ سے زائد کی 8 ٹرانزیکشن کیں جبکہ سب سے زیادہ 3 کروڑ کی رقم ایک ٹرانزیکشن کے زریعے منتقل ہوئی۔ سابق وزیراعلی کی جانب سے 4 مشکوک ٹرانزیکشن یکم جنوری 2017 کو کی گئیں اور پانچویں مشکوک ٹرانزیکشن 28 اپریل 2017 میں ہوئی۔ شہباز شریف نے یہ تمام ٹرانزیکشن اس وقت کیں جب وہ وزیراعلی پنجاب تھے۔ نیب ذرائع کا کہنا ہے کہ سابق وزیراعلی پنجاب اور سلمان شہباز ان مشکوک ٹرانزیکشن کا تسلی بخش جواب نہیں دے سکے۔

 

نیب ذرائع کا کہنا ہے کہ سابق وزیراعلی پنجاب کی مشکوک ٹرانزیکشن کا ریکارڈ اسٹیٹ بنک آف پاکستان کے پاس بھی نہیں ہے۔ نیب کی جانب سے شہباز شریف کے خلاف بنک اکاؤنٹس اور مشکوک ٹرانزیشکن کی انکوائری یکم جنوری 2018ء میں شروع کی گئی۔

عطاء سبحانی  3 ہفتے پہلے

متعلقہ خبریں