نیب لاہور کی جانب سے سال 2019ء کے پہلے 4 ماہ کی کارکردگی رپورٹ جاری

لاہور(مستنصر عباس) احتساب بیورو (نیب لاہور) نے کارکردگی رپورٹ جاری کر دی ہے، چار ماہ میں نیب نے مختلف کیسز میں 46ملزموں کو گرفتار کیا جبکہ 11کیسز کی تحقیقات کو مکمل کر کے ریفرنسز دائر کیے اور مجموعی طور پر 2 ارب50کروڑ کی پلی بارگین کی درخواستیں منظور کی گئیں۔

 

نیب لاہور کی جانب سے سال 2019کے پہلے چار ماہ کی کارکردگی رپورٹ جاری کی گئی ہے جس کے مطابق 4 ماہ کے دوران مختلف کیسز میں 46ملزموں کو گرفتار کیا ہے جن میں عبدالعلیم خان، شریف فیملی کے لیے منی لانڈرنگ کے الزام میں ملزمان قاسم قیوم، فضل داد، شاہد شفیق، مشتاق چینی، آفتاب محمود سرفہرست ہے۔

 

نیب رپورٹ کے مطابق چار ماہ میں کرپشن کیسز میں 25 ملزموں کی مجموعی طور پر 2 ارب 50 کروڑ مالیت پر مشتمل پلی بارگین کی درخواستیں احتساب عدالت کے ذریعے منظور کی گئیں جبکہ اس دوران ملزمان سے 1 ارب 27 کروڑ روپے کی ڈائریکٹ وصولی کی جاچکی جسکی متعلقہ اداروں کو منتقلی جاری ہے۔

 

رپورٹ کے مطابق 4 ماہ میں 14 نئی تحقیقات کی منظوری دی گئ جس کے بعدنیب میں زیر تفتیش انویسٹی گیشنز کی تعداد 48ہوگئی،جبکہ 4 ماہ کے دوران کرپشن کیسز میں جاری تحقیقات مکمل ہونے پر 11 ریفرنس احتساب عدالت میں داخل کئے گئے جس میں سابق وزیراعلی پنجاب شہباز شریف اور حمزہ شہباز کیخلاف رمضان شوگر ملز ریفرنس، صاف پانی کمپنی کیس میں ملزم قمرالسلام و دیگر کیخلاف اہم ریفرنس شامل ہیں رپورٹ کےمطابق نیب لاہور میں 211 انکوائریاں بھی جاری ہیں۔

 

ڈی جی نیب شہزاد سلیم کا کہنا ہے کہ تمام میگا کرپشن مقدمات برق رفتاری سے منطقی انجام تک پہنچا رہے ہیں کیونکہ نیب کا ایمان "کرپشن فری پاکستان" ہے،ڈی جی نیب نے واضح کیا کہ کرپٹ و بدعنوان عناصر کے کیخلاف نیب کی کارروائیاں بلاامتیاز جاری رہیں گی۔

عطاء سبحانی  3 ماه پہلے

متعلقہ خبریں