نیب لاہور کا شہباز شریف کی فیملی کے بعد ملازمین کیخلاف تحقیقات کا آغاز

لاہور(شاکر محمود اعوان) نیب لاہور نے حمزہ شہباز اور سلمان شہباز کی فیکٹریوں کے ملازمین کا ریکارڈ طلب کر لیا ہے۔ نیب ذرائع کا کہنا ہے کہ دونوں بھائیوں نے اپنے ملازمین کے نام پر بھی اکاؤنٹ بنا رکھے ہیں، جن کے ذریعے اربوں روپے کی ٹرانزیکشن کی جاتی رہیں۔

 

نیب لاہور نے شہباز شریف کی فیملی کے بعد ملازمین کیخلاف بھی تحقیقات کا آغاز کر دیا ہے۔ نیب نے شریف ڈیری فامز، رمضان شوگر مل اور چینیوٹ انرجی لمیٹڈ کے ملازمین کا ریکارڈ مانگ لیا۔ نیب ذرائع کا کہنا ہے کہ حمزہ شہباز اور سیلمان شہباز نے اپنے ملازمین کے نام پر بنک اکاؤنٹس بنا رکھے ہیں، نیب کیجانب سے جاری مراسلے میں کہا گیا ہے کہ تینوں فیکٹریوں میں کتنے ملازمین کام کرتے ہیں، مکمل لیسٹ شناختی کارڈ نمبر اور ایڈریس فراہم کیے جائیں۔

 

نیب ذرائع کا کہنا ہے کہ سلمان شہباز کی کمپنی کے چپڑاسی ملک مقصود کے بنک اکاونٹ میں 3 ارب 30 کروڑ روپے منتقل ہونے کے شواہد ملنے کے بعد ملازمین کیخلاف تحقیقات کی جا رہی ہیں۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ شریف فیملی کے ملازمین کے نام پر بنک اکاؤنٹس بنا کر بھاری رقوم منتقل ہوئیں، فضل داد عباسی بے نامی اکاؤنٹس میں رقوم جمع کرواتا تھا، نیب زرائع کے مطابق بے نامی دار اکاؤنٹس کی زیادہ تر تعداد نجی بنک کی مسلم ٹاؤن کی برانچ میں ہیں اور مسلم ٹاون برانچ سے ملازمین کا ریکارڈ بھی طلب کر لیا گیا ہے۔

عطاء سبحانی  6 روز پہلے

متعلقہ خبریں