اپوزیش لیڈر پنجاب اسمبلی حمزہ شہباز سے نیب ٹیم نے تحقیقات کا آغاز کر دیا

لاہور(مستنصر عباس) منی لانڈرنگ میں گرفتار اپوزیشن لیڈر پنجاب اسمبلی حمزہ شہباز سے نیب ٹیم نے تحقیقات شروع کر دیں۔ نیب ٹیم نے حمزہ شہباز کو مشتاق چینی کے روبُرو بیٹھا کر منی لانڈرنگ کے حوالے سے سوالات کیے۔

 

منی لانڈرنگ کے الزام میں اپوزیشن لیڈر پنجاب اسمبلی حمزہ شہباز 14 روزہ جسمانی ریمانڈ پر نیب کی زیرحراست ہے، اپوزیش لیڈر پنجاب اسمبلی حمزہ شہباز سے نیب ٹیم نے تحقیقات کا آغاز کر دیا۔ نیب نے حمزہ شہباز کو وعدہ معاف گواہ مشتاق چینی کے روبرو بیٹھا کر سوالات کیے اور بنک اکاونٹس کی تفصیلات سامنے رکھتے ہوئے حمزہ شہباز سے منی لانڈرنگ میں ملوث ہونے کے حوالے سے جب پوچھا تو حمزہ شہباز نے اس کی تردید کی اور تو حمزہ شہباز کا کہنا تھا لہ وہ مخلص اور سچے پاکستانی ہہیں۔

 

نیب ذرایع کے مطابق حمزہ شہباز سے پوچھا گیا کہ منی لانڈرنگ میں ٹرانزکشنز آپ کے اکاونٹ میں ہوئی ہیں؟ حمزہ شہباز کا جواب دیتے ہوئے کہنا تھا کہ جس وقت کی آپ بات کر رہے ہیں، اس وقت اینٹی منی لانڈرنگ ایکٹ نافذ ہی نہیں تھا۔ حمزہ شہباز نیب انوسٹی گیش ٹیم کو مطمین نہ کر سکے اور اپنے والد شہباز شریف کی طرح اپنی حکومت کے کارنامے بتاتے رہے۔

 

اس سے قبل نیب حمزہ شہباز سے رمضان شوگر ملز کے حوالے سے تحقیقات جاری رکھے ہے، جس پر نیب کو خاطر خواہ جواب نہ مل سکا۔ حمزہ شہباز کا 12 جون کو نیب نے 14 روزہ جسمانی ریمانڈ حاصل کیا تھا، اس دوران حمزہ شہباز کے پنجاب اسمبلی بجٹ اجلاس میں شرکت کے لئے پروڈکشن آڈر جاری کر دیے گے، جس کی وجہ نیب حکام کو تحقیقات کے لئے کم وقت ملتا ہے۔

عطاء سبحانی  1 ماه پہلے

متعلقہ خبریں