یو ٹرن پر یو ٹرن، نوازشریف کا قطری خط سے بھی لاتعلقی کا اظہار

اسلام آباد (پبلک نیوز) نوازشریف کے بھی احتساب عدالت میں یو ٹرن پہ یوٹرن۔ قطری خط سے اظہار لاتعلقی کر دیا۔ نواز شریف نے سارا ملبہ حسین نواز پر ڈال دیا۔

نواز شریف نے احتساب عدالت کے روبرو بیان میں یوٹرنز لینے کی انتہا کر دی۔ کرپشن کیسز میں شریف خاندان کے دفاع کی عمارت جس ستون پر قائم تھی وہ تھا قطری خط تھا مگر نواز شریف نے قطری خط سے اظہار لا تعلقی کر دیا۔ اس کا مطلب یہ ہوا کہ یا تو حسین نواز کی جانب سے پیش کیا گیا قطری شہزادے کا خط جھوٹ پر مبنی تھا یا پھر نواز شریف دروغ گوئی سے کام لے رہے ہیں۔ یعنی کوئی ایک فریق غلط بیانی کر رہا ہے۔

تجزیہ کار کا یہاں تک کہنا ہے کہ حسین نواز اپنے ہی والد نواز شریف سے ہاتھ کر گئے۔ یہی وجہ ہے کہ نواز شریف نے قطری خط سے اظہارِ لاتعلقی کر کے بالواسطہ حسین نواز کو جھوٹا قرار دے دیا۔ قانونی ماہرین اس بات پر بھی متفق دکھائی دے رہے ہیں کہ اسی وجہ سے حسین نواز وطن سے فرار ہو گئے اور اشتہاری کا تمغہ سینے پر سجا لیا۔ کیونکہ حسین نواز کو بھی کسی ایک موقف کو غلط قرار دینا ہو گا۔ اپنے والد کی تقریر کو یا پھر قطری خط کو۔ یہ ساری صورتحال کچھ سوالات کو جنم دیتی ہے۔ کون سچا ہے اور کون جھوٹ بول رہا ہے۔

حارث افضل  1 ماه پہلے

متعلقہ خبریں