مفتی تقی عثمانی پر حملہ کیس کی کڑی سے کڑی ملنے لگی

کراچی (پبلک نیوز) مفتی تقی عثمانی پر حملہ کیس میں قانون نافذ کرنے والے اداروں نے کڑی سے کڑی ملانا شروع کر دی۔ پولیس نے مقدمے کی نقول عدالت میں جمع کرا دیں۔

تفصیلات کے مطابق مفتی تقی عثمانی پر قاتلانہ حملے کا معاملہ اپنے حل کی جانب گامزن ہو چکا ہے۔ دہشتگردوں کی سی سی ٹی وی فوٹیج میں ملزموں کو نیپاپل کے نیچے سے یوٹرن سے فرار ہوتے دیکھا جا سکتا ہے۔ سی سی ٹی وی فوٹیج کے مطابق دہشتگردوں کو راشد منہاس روڈ سے مولانا شہاب کی گاڑی کا پیچھا کرتے ہوئے بھی دیکھا جا سکتا ہے۔

دوسری جانب پولیس نے مفتی تقی عثمانی پر حملہ کے مقدمہ کی نقول عدالت میں جمع کرا دیں۔ سب انسپکٹر کی مدعیت میں مقدمہ قتل اقدام دہشتگردی اور خوف وہراس پھیلانے کی دفعات کے تحت عزیز بھٹی تھانے میں درج کیا گیا۔

ایف آئی آر کے مطابق 22مارچ کو دوپہر تین موٹر سائیکل سواروں نے نیپا کے قریب دوگاڑیوں پر فائرنگ کی۔ وقوعہ سے نائن ایم ایم کے پندرہ خول تحویل میں لے کر سیل کر دیئے گئے۔ دہشتگردوں کی فائرنگ سے حبیب نامی شخص زخمی کانسٹیبل محمد فاروق اور محافظ صنوبر خان جاں بحق ہو گئے تھے۔

احمد علی کیف  3 ہفتے پہلے

متعلقہ خبریں