سانحہ ماڈل ٹاؤن کی نئی جے آئی ٹی نے باقاعدہ تحقیقات آغاز کر دیا

لاہور(مرزا رمضان بیگ) سپریم کورٹ کے حکم پر بنی سانحہ ماڈل ٹاؤن کی نئی جے آئی ٹی نے تحقیقات کا آغاز کر دیا، جے آئی ٹی نے پاکستان عوامی تحریک سے واقعہ سے متعلق تمام ثبوت مانگ لیے۔

 

سپریم کورٹ آف پاکستان کے احکامات کی روشنی میں بننے والی جے آئی ٹی نے سانحہ ماڈل ٹاؤن پر باقاعدہ تحقیقات شروع کر دیں۔ جے آئی ٹی کی سربراہی آئی جی موٹر وے اے ڈی خواجہ کررہے ہیں۔ جے آئی ٹی نے واقعہ کے گواہان کا ریکارڈ بھی طلب کر لیا۔ سانحہ ماڈل ٹاؤن پر بننے والی پہلی جے آئی ٹی کی رپورٹ کو عوامی تحریک نے مسترد کر دیا تھا۔

متعلقہ خبر:سانحہ ماڈل ٹاؤن کیس،پہلی جے آئی ٹی ممبران کے بیانات ریکارڈ کرنے کا فیصلہ

واضع رہے کہ پہلی جے آئی ٹی نے مقدمہ میں نامزد نواز شریف، شہباز شریف اور دیگر وزراء سمیت اعلی پولیس اہلکاروں کو بھی بے گناہ قرار دیا تھا۔ نئی جے آئی ٹی کی تشکیل کا مقصد پتہ لگانا ہے کہ آپریشن کا حکم کس نے دیا اور گولی کس کے حکم پر چلائی گئی، جبکہ سابق پنجاب حکومت اور ان کے وفادار اعلیٰ پولیس افسران نے سر جوڑ لئے اور فیصلہ کیا ہے کہ کسی صورت ڈاکٹر طاہر القادری کے مؤقف کو سچ ثابت نہیں ہونے دیا جائے گا۔ واقعہ میں ملوث بعض اعلیٰ پولیس افسران نے سابق پنجاب حکومت پر واضح کر دیا ہے کہ اب وہ حقائق کو مزید نہیں چھپا سکتے۔

 

عطاء سبحانی  6 روز پہلے

متعلقہ خبریں