آکسفرڈ اور کیمبرج میں تعلیم کے شعبے میں اسکینڈل

پبلک نیوز: امریکا کی ٹاپ یونیورسٹیوں میں رشوت سے داخلوں کے بعد برطانیہ میں بھی بڑا تعلیمی اسکینڈل سامنے آ گیا۔ رقم دو مقالہ لو۔ پی ایچ ڈی اسٹوڈنٹس کو تھیسز تیار کرنے کے لیے آن لائن ملز کی پیش کش پر اسٹنگ آپریشن نے بڑی یونیورسٹیوں کا بھانڈا پھوڑ دیا۔

 

برطانیہ میں آن لائن کمپنیوں کی جانب سے طلبا کے لیے تھیسز لکھنے کی پیش کش کا بھانڈا پھوٹ گیا۔ برطانوی اخبار میل آن لائن کے صحافی نے کمپنیوں پر اسٹنگ آپریشن کیا۔

 

شیکسپئر کے ناولز پر مقالہ ہو یا نفسیاتی امور کے تجزیوں کا، سب ملے گا۔ آن لائن ملز کے مطابق طالبِ علم کا کام صرف پہلے صفحے پر اپنا نام لکھنا ہے۔  پی ایچ ڈی کے لیے 80 ہزار الفاظ پر مشتمل اچھا مقالہ چار ماہ میں تیار ہو جاتا ہے، جس کی قیمت 11 لاکھ روپے ہے۔

 

روزانہ سو آرڈر ملتے ہیں، جن میں 15 سے 20 پی ایچ ڈی کے ہوتے ہیں۔ کمپنی کے مطابق وہ سالانہ 12 ہزار برطانوی طلبہ کو مقالے بیچ رہے ہیں۔ جن میں سے 50 خریدار آکسفرڈ اور کیمبرج میں پی ایچ ڈی کے طلبہ ہیں۔

 

آکسفرڈ اور کیمبرج نے لکھے لکھائے مقالوں پر پی ایچ ڈی ڈگری دینے کا الزام مسترد کر دیا ہے۔ 46 یونیورسٹیوں کے وائس چانسلرز نے چیٹنگ ویب سائٹس کے خلاف پچھلے برس وزیر تعلیم کو خط لکھا تھا۔

حارث افضل  2 ماه پہلے

متعلقہ خبریں