سفارتکاروں کا دورہ کنٹرول لائن، بھارتی ہائی کمیشن کا کوئی سفارتکار ساتھ چلنے کی اخلاقی جرات نہ کرسکا

پبلک نیوز: سچ چھپایا نہیں جا سکتا اور جھوٹ کے پائوں نہیں ہوتے۔ پاکستان نے بھارت کا مکروہ چہرہ دنیا کے سامنے بےنقاب کر دیا۔ مودی سرکار اور بھارتی آرمی چیف کے جھوٹے دعوے ہوا ہو گئے۔ پاکستان نے سچ پوری دنیا کے سامنے پیش کر دیا۔ غیرملکی سفارتکاروں اور میڈیا کے وفد کو آزاد کشمیر کا دورہ کرایا گیا۔ پاکستان کی بار ہا پیشکش کے باوجود بھارتی ہائی کمیشن کا کوئی سفارتکار نہ آیا۔

 

اسلام آباد میں تعینات غیر ملکی سفارت کاروں اور میڈیا نمائندوں کو لائن آف کنٹرول کے ان سیکٹرز کا دورہ کرایا گیا۔ پاکستان کی کھلی پیشکش کے باوجود بھارتی ہائی کمیشن کا کوئی سفارتکار ساتھ چلنے کی اخلاقی جرات نہ کر سکا۔ کیونکہ ڈر تھا اپنے سامنے اپنی سرکار کے جھوٹ کا پردہ چاک ہونے کا۔

 

لیکن سچ تو سامنے آنا ہی تھا۔ غیرملکی سفارتکاروں اور میڈیا کو کسی بھی جگہ جانے کی مکمل آزادی دی گئی، کھلی پیشکش کی گئی کہ وہ خود جائزہ لیں۔  کیا بھارت ایسی آزادی اور اجازت مقبوضہ کشمیر میں دے سکتا ہے؟

 

سفارتی کمیونٹی کو بھارتی فوج کی طرف سے فائر کیے گئے آرٹلری شیلز اور مارٹر گولے بھی دکھائے گئے۔ سفارت کاروں نے جورا بازار کا دورہ کیا۔ تباہ شدہ دکانیں، گھر اور بازار دیکھے، مقامی افراد اور دکانداروں سے ملے۔ دکانوں پر خریداری بھی کی۔ غیرملکی سفارتکار بھی بھارتی دعوؤں پر حیران ہوئے کہا کہ یہاں تو معصوم شہریوں کو نشانہ بنایا گیا۔

 

ترجمان پاک فوج نے سفراء کو تبایا کہ بھارت کتنی بار جنگ بندی معاہدے کی خلاف ورزی کر چکا ہے، بتایا کہ 2018 میں 58 شہری شہید ہوئے اور 2019 میں اب تک 44 شہری بھارتی جارحیت کا نشانہ بن چکے ہیں۔

 

ڈی جی آئی ایس پی آر نے کہا کہ پاک فوج عسکری روایات کی امین ہے۔ پاک فوج اور بھارت کی فوج میں بنیادی فرق ہی یہی ہے کہ وہ بلااشتعال گولہ باری کر کے معصوم شہریوں کو جبکہ پاک فوج جواب میں بھارتی چوکیوں کو نشانہ بناتی ہے۔

احمد علی کیف  3 ہفتے پہلے

متعلقہ خبریں