افغان امن عمل پر سہ فریقی مذاکرات، 5 نکات پر اتفاق

 

اسلام آباد (پبلک نیوز) اسلام آباد میں پاک افغان چین سہ فریقی مذاکرات کا تیسرا دور منعقد ہوا۔ مذاکرات کے دوران پاکستان، چین اور افغانستان کے وزرائے خارجہ نے سکیورٹی تعاون بڑھانے، اقتصادیات اور انسداد دہشتگردی کے شعبوں سمیت 5 نکات پر اتفاق کیا۔ آئندہ سہ فریقی مذاکرات بیجنگ میں کرانے پر اتفاق ہوا ہے۔

 

تفصیلات کے مطابق پاک چین افغان سہ فریقی مذاکرات کا تیسرا دور ختم ہو گیا۔ پاکستانی وفد کی قیادت وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی، چینی وفد کی قیادت وانگ ژی جبکہ افغانستان کے وفد کی قیادت صلاح الدین ربانی نے کی۔ مذاکرات کے دوران پاکستان، چین اور افغانستان کے وزرائے خارجہ نے سکیورٹی تعاون بڑھانے، اقتصادیات اور انسداد دہشتگردی کے شعبوں سمیت 5 نکات پر اتفاق پر کیا۔ آئندہ سہ فریقی مذاکرات بیجنگ میں کرانے پر اتفاق ہوا ہے۔

 

واضح رہے کہ اسلام آباد میں پاک افغان چین سہ فریقی مذاکرات کا تیسرا دور منعقد ہوا۔ وزیر خارجہ شاہ محمود  قریشی کی زیر صدارت اجلاس میں  افغان اور چینی وزرائے خارجہ نے شرکت کی۔ اس سے قبل 2017 میں بیجنگ اور 2018 میں  کابل میں 2 ادوار منعقد ہوچکے ہیں۔ پاکستان آمد سے قبل چینی وزیر خارجہ کا دورہ بھارت شیڈول تھا جو منسوخ کر دیا گیا۔

اجلاس کے اختتام پر مشترکہ پریس کانفرنس کرتے ہوئے شاہ محمود قریشی کا کہنا تھا کہ اس اجلاس میں ہم نے سیاسی تعاون، انسداد دہشت گردی، عوامی سطح پر رابطوں سمیت متعدد پہلوؤں پر تبادلہ خیال کیا۔ مجھے یہ بتاتے ہوئے خوشی ہو رہی ہے کہ پاک چین افغانستان سہ ملکی مذاکرات کا چوتھا دور بیجنگ میں ہو گا۔ پاک افغان تعلقات میں استحکام پیدا ہوا ہے۔ سہ ملکی میکانزم انتہائی سود مند فورم ہے۔

 

 

شاہ محمود قریشی کا مزید کہنا تھا کہ افغان امن عمل کے لیے نیک خواہشات رکھتے ہیں۔ چائنہ ایک با اعتماد دوست، قابل بھروسہ ساتھی اور دیرینہ شراکت دار ہے۔ سہہ فریقی مذاکرات انتہائی اہم ہیں۔ عمران خان اور اشرف غنی کے درمیان بہترین ملاقات ہوئی۔ چین پاکستان کا دوست اور۔ رائے دار ملک ہے۔ مجھے توقع ہے کہ ہمارے تعلقات میں یقیناً بہتری آئے گی کیونکہ ہمارے باہمی روابط استوار ہیں۔

 

چینی وزیر خارجہ وانگ ژی کا اس موقع پر کہنا تھا کہ افغانستان کے سی پیک میں شمولیت کے خواہش مند ہیں۔ افغان وزیر خارجہ کا کہنا تھا کہ افغانستان میں مسائل کا حل انٹرا افغان ڈائیلاگ کے ذریعے نکالنے پر اتفاق ہوا۔

 

احمد علی کیف  2 ہفتے پہلے

متعلقہ خبریں