وطن عزیز میں "یوم پاکستان" آج ملی جوش و جذبہ سے منایا جا رہا ہے

ادریس شیخ

23مارچ 1940 اس مملکت خداداد کے حصول کی پہلی سیڑھی کی حیثیت رکھتا ہے۔ آل انڈیا مسلم لیگ کے سالانہ اجلاس میں منظور ہونے والی قرارداد پاکستان سے ہی برصغیر کے مسلمانوں کیلئے الگ وطن کی منزل کا تعین ہوا۔

23مارچ 1940 کا دن برصغیر کے مسلمانوں کی تاریخ میں سنگ میل کی حیثیت رکھتا ہے،اسی دن کی وجہ سے دنیا کی پہلی اسلامی نظریاتی سلطنت وجود میں آئی اور مسلمانوں کو انگریزوں اور ہندوئوں کے جبر سے آزادی ملی۔

قابض انگریز اور چالاک ہندو کے ہتھکنڈوں کے جواب میں مسلمانان ہند نےمنٹوپارک میں  23مارچ 1940 کے اجلاس میں ایک آزاد اسلامی مملکت کے حصول کی منزل کا تعین کیا۔ شیربنگال مولوی فضل الحق نے الگ وطن کی قرارداد پیش کی، جسے متفقہ   طور پرمنظور کر لیا گیا۔

قائداعظم محمد علی جناح نے اپنی تقریر میں مسلمانوں کے مسائل کا ذکر کیا۔ ان کا کہنا تھا کہ مسلمان قوم کی ہر تعریف میں ہندوئوں سے الگ ہیں۔ مسلمانوں کے ساتھ ساتھ ہندوئوں کے مسائل کا حل بھی ایک الگ اسلامی ملک ہے۔

صرف 7 سات کی جدوجہد کےبعد پاکستان کے معرض وجود میں آنے سے ثابت ہوگیا کہ جب قیادت مخلص، دردمند، مسائل اور جغرافیہ سے مکمل طور پر آگاہ ہو اور منزل کا راستہ اسکے دل و دماغ میں نقش ہو تو پھر مقصد کے حصول میں کوئی رکاوٹ حائل نہیں رہ سکتی۔

احمد علی کیف  1 ماه پہلے

متعلقہ خبریں