پاکستان نے تیل، گیس کے نئے ذخائر دریافت کر لیے

کراچی (پبلک نیوز) سندھ کے ضلع سانگھڑ میں ہدف ایکس ون کنویں سے تیل اور گیس کے ذخائر دریافت ہوئے ہیں۔ ہدف ایکس ون کنویں سے 19 ایم ایم سی ایف ڈی گیس کی ذخائر ملے ہیں۔

پاکستان پٹرولیم لمیٹڈ (پی پی ایل) کی جانب سے جاری کردہ اعلامیہ کے مطابق پی پی ایل نے اپنے شراکت داروں گورنمنٹ ہولڈنگز پرائیویٹ لمیٹڈ (جی ایچ پی ایل) اور ایشیا ریسورسز آئل لمیٹڈ (اے آر او ایل) کے ساتھ مل کر ضلع سانگھڑ، صوبہ سندھ میں واقع گمبٹ ساؤتھ بلاک (2568-18) کے دریافتی کنویں ہدف ایکس 1 (ایس ٹی) سے گیس اور کنڈنسیٹ کی دریافت کا اعلان کردیا ہے۔

پی پی ایل ایس بلاک میں 65 فیصد کاروباری شراکت کے ساتھ آپریٹر ہے جبکہ جی ایچ پی ایل اور اے آر او ایل کی کاروباری شراکت داری بالترتیب 25 اور 10 فیصد ہے۔

لوور گوروفارمیشن کے میںسو سینڈ میں ہائیڈروکاربن کی جانچ کے لیے ہدف ایکس 1 ایس ٹی کی کھدائی کا آغاز 19 اگست 2018 کو ہوا جسے 3700 میٹر کی گہرائی تک پہنچایا گیا۔ وائر لائن کی بنیاد پر ٹارگٹ شدہ ذخائر میں ہائیڈروکاربن رکھنے والے ممکنہ زونز کی نشاندہی ہوئی۔ لوور گورو فارمیشن میں کی گئی ڈیل اسٹیم جانچ کے دوران درج ذیل نتائج حاصل ہوئے۔

64/56 انچ چوک سائز اور 1307 پی ایس آئی فلوئنگ ویل ہیڈ پریشر پر یومیہ 18.6 ملین کیوبک فیٹ گیس 160 بیرل کنڈنسیٹ اور 65 بیرل پانی حاصل ہوئے۔

اس دریافت سے ہائیڈروکاربن کے ذخائر میں اضافہ ہوگا اور ملک میں توانائی کے موجودہ بحران میں طلب اور رسد کے مابین فرق میں کمی ممکن ہو گی۔

ماہرین کا کہنا ہے کہ تیل و گیس کے ذخائر کی دریافت سے پاکستان کو قیمتی زرمبادلہ کی بچت ہوگی۔

حارث افضل  1 ہفتے پہلے

متعلقہ خبریں