پاکستان پاک ایران گیس پائپ لائن منصوبے کی تکمیل کا خواہشمند

اسلام آباد (پبلک نیوز) پاکستان پاک ایران گیس پائپ لائن منصوبے کی تکمیل کا خواہشمند ہے، پاکستان نے منصوبے کی راہ میں درپیش چیلنجز کو ایران کے ساتھ  مل کر حل کرنے کے لیے کام شروع کر دیا۔

 

گیس پائپ لائن منصوبہ پاکستان اور ایران کے تعلقات میں تناؤ کا باعث بننے لگا۔ ایران نے اپنے نوٹس میں موقف اختیار کیا تھا کہ پاکستان نے اگر گیس پائپ لائن منصوبہ مکمل نہ کیا تو معاملے کے حل کے لیے عالمی عدالت سے رجوع کرے گا۔ پاکستان منصوبے میں تاخیر پر عالمی پابندیوں کو جواز قرار دے رہا ہے۔

 

پاک ایران تناؤ کی صورت حال میں وزیر اعظم عمران خان خود میدان میں آ گئے ذرائع کا کہنا ہے کہ ایران کے نوٹس پر غور کے لیے وزیراعظم عمران خان کی زیر صدارت اجلاس ہوا جس میں وزیر اعظم نے ایران پاکستان گیس پائپ لائن منصوبے کے حوالے سے ضروری احکامات جاری کی۔ وزیراعظم نے اقوام متحدہ، امریکا، یورپین کونسل سمیت دیگر فورمز کو قانونی یادداشت بھیجنے کی ہدایت کی۔

 

وزیراعظم عمران خان کا کہنا ہے کہ ایران پر عالمی پابندیاں منصوبے پر ذمہ داریاں پوری کرنے میں رکاوٹ ہیں اس سلسلے میں انہوں نے ہدایت کی ہے کہ ایران کے ساتھ آئی پی گیس منصوبے کے لیے مفاہمتی طریقہ اختیار جائے اور مل کر منصوبے پر عمل درآمد کے امکانات تلاش کئے جائیں۔ وزیراعظم کی جانب سے وزارت خارجہ کو ایران کے ساتھ تناؤ ختم کرنے کے لیے اقدامات کی ہدایت کرتے ہوئے کہا گیا کہ عالمی اداروں سے ایران پاکستان گیس پائپ لائن منصوبے پر واضح پوزیشن لی جائے اور ایران سے گیس کی قیمت خرید پر بھی نظرثانی کا عمل شروع کیا جائے۔

حارث افضل  1 ہفتے پہلے

متعلقہ خبریں