ایف اے ٹی ایف کی گرے لسٹ سے نکلنے کے لیے پاکستان کی کوششیں

اسلام آباد (پبلک نیوز) ایف اے ٹی ایف کی گرے لسٹ سے نکلنے کے لیے پاکستان کی سرتوڑ کوششیں جاری ہیں۔ ایف اے ٹی ایف کی ٹیم کو مذاکرات میں منی لانڈرنگ کے خلاف موثر قانون سازی کی یقین دہائی کرائی گئی۔

تفصیلات کے مطابق فنانشل ایکشن ٹاسک فورس سے مذاکرات کا آج آخری دور ہو گا۔ ذرائع کے مطابق ایف اے ٹی ایف کی شرائط پر عملدرآمد اور اقدامات پر آغاز بھی ہوگیا۔

قوانین پر عملدرآمد کے لیے ٹاسک فورس بنانے کا فیصلہ کرلیا۔ ذرائع کے مطابق وفاقی اور صوبائی سطح پر اینٹی منی لانڈرنگ ٹاسک فورس بنائی جائے گی۔ سیکرٹری داخلہ ٹاسک فورس کے سربراہ ہوں گے۔ ٹاسک فورس کے دفاتر ملک کے تمام ایئرپورٹس پر قائم کئے جائیں گے۔ اینٹی منی لانڈرنگ ٹاسک فورس بین الاقوامی این جی اوز کی ٹرانزیکشن کی مانیٹرنگ بھی کریگی۔

ذرائع کے مطابق پاکستان نے ایف اے ٹی ایف کو اینٹی منی لانڈرنگ قوانین مزید سخت کرنے کی یقین دہانی بھی کرادی ہے۔ کرنسی، سونا، چاندی، اور دیگر اشیاء کی بیرون ملک سمگلنگ کی سزا اور جرمانے میں اضافہ کیا جائے گا۔ ایف آئی اے ایکٹ انیس سو چوہتر اور اسٹیٹ بینک ایکٹ انیس سو سینتالیس میں بھی ترامیم کی جائے گی۔ اینٹی منی لانڈرنگ ایکٹ دو ہزار دس میں بھی ترمیم کی جائے گی۔

حارث افضل  1 ماه پہلے

متعلقہ خبریں