سندھ میں میٹرک کے پرچے آؤٹ ہو گئے

پبلک نیوز: پیپر دینا ہو تو کتاب ساتھ لے کر جائیے۔ جواب ڈھونڈنے میں مشکل ہے تو حل شدہ پیپر بھی دستیاب ہے۔ ٹیکنالوجی کے دلدادہ ہیں تو موبائل فون اورانٹرنیٹ استعمال کیجئے۔ سندھ میں شروع ہونے والے نویں اور دسویں جماعت کے امتحانات عملاً مذاق بن کر رہ گئے۔

امتحانی مراکز میں نقل کے لیے کتابوں، بوٹی اور موبائل فون کا کھلم کھلا استعمال ہوا۔ بوٹی مافیا کسی روک ٹوک کے بغیر امیدواروں کو کتابیں، حل شدہ پیپر اور دیگر مواد پہنچاتا رہا۔ شکار پور میں نویں جماعت کا سندھی زبان کا پرچہ آؤٹ ہوا۔

امیدواروں نے پرچہ حل کرنے کے لیے کتابوں اور موبائل فون کا آزادانہ استعمال کیا۔ عمر کوٹ میں نویں جماعت کا انگریزی پرچہ فوٹو سٹیٹ کی دکانوں پر بکتا رہا۔ گھوٹکی اور کشمور میں حل شدہ پرچہ 200 سے 300 روپے میں بکتا رہا۔

لاڑکانہ بورڈ کے امتحانات میں بھی بوٹی مافیا سرگرم رہا۔ کشمور کے امتحانی مراکز میں اردو کے پیپر میں بھی نقل چلتی رہی۔ جیکب آباد سندھی زبان کے پرچے حل کرنے میں واٹس ایپ کی مدد لی گئی۔ سکھر، خیر پور اور میرپور خاص میں بھی میٹرک کے پرچے آؤٹ ہوئے۔

احمد علی کیف  2 ہفتے پہلے

متعلقہ خبریں