آزادی مارچ: وزیراعظم نے مذاکراتی کمیٹی کو فیصلوں کا اختیار دے دیا

اسلام آباد (ٹکا خان ثانی) وزیراعظم سے حکومتی مذاکراتی کمیٹی کی ملاقات میں اہم فیصلے، کمیٹی نے ایک بار پھر وزیر اعظم کے استعفے، ان ہاوس تبدیلی، اور قبل از وقت انتخابات کا مطالبہ مسترد کر دیا، کمیٹی کا معاملہ سیاسی طریقے سے حل کرنے پر اتفاق۔

 

آزادی مارچ کے حوالے سے قائم حکومتی مذاکراتی کمیٹی نے وزیراعظم عمران خان سے ملاقات کی۔ چوہدری پرویز الہیٰ نے مولانا اور پرویز خٹک نے رہبر کمیٹی سے ملاقات کا احوال بتایا۔ چوہدری پرویز الہیٰ نے بتایا کہ مولانا سے درمیانی راستہ نکالنے کی درخواست کی ہے۔ معاملات بہتر ہو رہے ہیں، امید ہے افہام وتفہیم سے معاملہ حل ہو جائے گا۔ وزیراعظم نے کمیٹی کی رپورٹ اور کارکردگی پر مکمل اطمینان کا اظہار کیا۔ انہوں نے کہا کہ ملک میں استحکام لانا سب کے حق میں بہتر ہو گا۔ ذرائع کے مطابق ملاقات میں اتفاق ہوا کہ آزادی مارچ والوں کو جمہوری طریقے سے قائل کیا جائے گا۔

 

وزیراعظم نے مذاکراتی کمیٹی کو فیصلوں کا اختیار دے دیا۔ کمیٹی نے واضح کیا کہ وزیراعظم کے استعفیٰ کی شرط پر کوئی سمجھوتہ نہیں ہو گا۔ ان ہاؤس تبدیلی اور قبل از انتخابات پر بھی کوئی بات نہیں ہو گی۔ وزیراعظم نے ہدایت کی کہ رہبر کمیٹی سے جائز اور آئینی مطالبات پر بات چیت کریں۔ وزیراعظم نے چودھری برادران کے کردار کی بھی تعریف کی۔ وزیراعظم نے کہا کہ جمہوری لوگ ہیں، جمہوری انداز میں احتجاج کی اجازت دی، اب قانون ہاتھ میں لینے کی اجازت نہیں دی جائے گی۔ مذاکرات کے لیے کمیٹی تشکیل دی، اچھے نتائج کی توقع ہے۔

عطاء سبحانی  1 ہفتے پہلے

متعلقہ خبریں