غریبوں کو اُوپر لائے بغیر معاشرہ ترقی نہیں کر سکتا: وزیراعظم

اسلام آباد(پبلک نیوز) وزیراعظم عمران خان کا کہنا ہے کہ 5سال میں 50لاکھ گھروں کی تعمیر ٹارگٹ ہے۔ پاکستان میں ایک کروڑ گھروں کی کمی ہے۔ کسی بھی چیز کا انفرا سٹرکچر بن جائے تو کام آسان ہو جا تا ہے۔

 

اسلام آباد میں بین الاقوامی ہاؤسنگ کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم عمران خان کا کہنا تھا کہ لوگ سمجھتے ہیں 50لاکھ گھروں کی تعمیر سیاسی نعرہ ہے۔5سال میں 50لاکھ گھروں کی تعمیر ٹارگٹ ہے۔ پاکستان میں ایک کروڑ گھروں کی کمی ہے۔ اگلے ماہ ہاؤسنگ منصوبے پر کام شروع ہو جائے گا۔ چاہتے ہیں نوجوان آئیں، کمپنیاں بنائیں اور پیسہ کمائیں۔ ہماری ٹاسک فورس بہت محنت سے کام کر رہی ہے۔ غریبوں کو اوپر لائے بغیر معاشرہ ترقی نہیں کر سکتا۔

 

پاکستان میں ایک کروڑ گھروں کی کمی ہے اور 50 لاکھ گھروں کا ہدف انتہائی مشکل چیلنج ہے، ہماری ٹاسک فورس بڑی محنت سے کام کررہی ہیں اور یہ ٹاسک فورس میرے ماتحت ہے۔500ارب مالیت کی زمین واگزار کرا چکے ہیں۔ قبضہ گروپ سی ڈی اے کی زمین سے ارب پتی بن گئے۔ تعلیم، رہائش، علاج سب طاقتور طبقے کے لیے ہے۔ لوگوں کو بڑی عمارتیں بنانے کی اجازت دیں گے۔ اسلام آباد سمیت ملک بھر میں قبضہ گروپ موجود ہیں۔ سرکاری محکمے حکومت کو اپنی زمین کی معلومات نہیں دے رہے۔

وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ ہاؤسنگ اسکیم کے حوالے سے تقریب منعقد کرنے پر عالمی بینک کا شکر گزار ہوں۔ پاکستان میں 50 لاکھ گھر بنانے کے لیے انفراسٹرکچر نہیں ہے۔ گھر بنانے میں مشکلات آئیں گی، پر انشااللہ کامیاب ہوں گے۔ پختونخوا میں ایک ارب درخت لگانے کا فیصلہ کیا تو مشکل تھا پر کر کے دکھایا۔ کسی بھی چیز کا انفرا سٹرکچر بن جائے تو کام آسان ہو جاتا ہے۔ چاہتے ہیں نوجوان بڑھ چڑھ کر حصہ لیں۔

 

وزیراعظم کا مزید کہنا تھا کہ منصوبہ شروع ہو گا تو انڈسٹریاں لگیں گی، روز ملے گا۔ ہاؤسنگ منصوبے سے 40 صنعتوں کو فائدہ ملے گا۔ پاکستان میں ایک کروڑ گھروں کی کمی ہے۔ ہاؤسنگ منصوبہ کم آمدن لوگوں کے لیے ہے۔ فیصلہ کیا تھا غریب لوگوں کو ان کی جگہ سے نہیں ہٹایا جائے گا۔ قبضہ گروپوں کے خلاف کریک ڈاؤن کرکے زمینیں واگزار کرائیں۔ قبضہ مافیا کو جیلوں میں ڈالنے کا فیصلہ کیا ہے۔ کوشش ہے فاٹا اور قبائلی علاقوں کو جلد از جلد ترقی یافتہ بنائیں۔ ملائیشیا اور چین نے ہاؤسنگ اسکیم میں دلچسپی ظاہر کی۔

عطاء سبحانی  2 ماه پہلے

متعلقہ خبریں