ٹیکس سے اکھٹا ہوا دو ہزار ارب قرضوں کی قسطوں میں چلا جاتا ہے: وزیراعظم

کوئٹہ(پبلک نیوز) وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ ماضی کے حکمرانوں نے اس ملک کے ساتھ جو کیا وہ کوئی دشمن بھی نہ کرے۔ پاکستان میں صرف پیسے والے گھر بنا سکتے ہیں، کمزور طبقے کی ترقی سے ملک آگے بڑھے گا۔

 

وزیراعظم عمران خان نے کوئٹہ میں نیا پاکستان ہاؤسنگ منصوبے کا سنگ بنیاد رکھ دیا، وزیراعظم عمران خان نے تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ طارق بشیرچیمہ نے منصوبے کے لیے جنون کے ساتھ کام کیا۔ پاکستان میں صرف پیسے والے گھر بنا سکتے ہیں۔ عام آدمی کو چھت کی سب سے زیادہ ضرورت ہوتی ہے۔ تنخوا ہ دار طبقہ اپنا گھر ہی نہیں بنا سکتا، آج بلوچستان کے مستقبل سے بات کر رہا ہوں۔ ماضی کے حکمرانوں نے اس ملک کے ساتھ جو کیا وہ کوئی دشمن بھی نہ کرے۔ ٹیکس سے اکھٹا ہوا دو ہزار ارب قرضوں کی قسطوں میں چلا جاتا ہے۔ وزیراعظم نے کہا بس تھوڑی دیر مشکل وقت ہے یہ قرض بھی اتر جائے گا۔

 

وزیراعظم کا کہنا تھا کہ کرپشن بڑھتی رہی لیکن تنخوادار طبقے کی تنخوا اس تناسب سے نہ بڑھی۔ ملائیشیا، چائنہ اور برطانیہ سے کمپنیاں سرمایہ کاری کرنے کو تیار ہیں، پاکستان میں صرف 0.2فیصد لوگ گھر بنانے کے لیے قرض لیتے ہیں، ممکن ہے کہ 5 سال میں 50سال سے زائد گھر بن جائیں۔ پاکستان میں گھر کے لیے قرض لینا مشکل ہے۔ یورپ میں 80 سے 90 فیصد لوگ گھر بنانے کے لیے بنک سے قرض لیتے ہیں۔7دن جیل میں گزارے وہاں صرف غریب لوگ دیکھے۔

وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ پہلی بار بڑے ڈاکو بھی جیل میں جا رہے ہیں۔ کمزور طبقے کی ترقی سے ملک آگے بڑھے گا، پہلے تو ڈاکو اسمبلیوں میں نظر آتے تھے۔ پسماندہ علاقوں کو ترقی دینے سے ہی قومیں بنتی ہیں، بلوچستان اندرون سندھ اور قبائلی علاقوں میں غربت دیکھی، ہماری حکومت ان علاقوں کی ترقی کے لیے خاص توجہ دے گی۔ پچھلے 10سال میں ملک کو بے دردی سے لوٹا گیا، پی پی اور ن لیگ کی حکومت نے جو ملک کے ساتھ کیا کوئی دشمن بھی نہیں کرتا۔

 

وزیراعظم عمران خان نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ دو طرح کے نظام سے ملک عظیم نہیں بن سکا، بلوچستان کی پرواہ ہے کیونکہ اللہ کو جواب دینا ہے، کینسر ہسپتال بنانا شروع کیا تو مذاق اڑایا گیا، پہلا میچ کھیلا تو ٹیم سے نکال دیا گیا، 4 سال لگے واپس آنے میں، سیاست شروع کی لوگ مذاق کرتے تھے، کہتے تھے دو پارٹی کے سسٹم میں تیسری پارٹی نہیں آ سکتی۔ آج وزیراعظم ہوں تو کہتے ہیں یہ ملک نہیں چلا سکتا فضل الرحما ن کی مثال ایسی ہے نہ کھیلیں گے نہ کھیلنے دیں، فضل الرحمان کی مثال کرکٹ میں روندو"کھلاڑی جیسی ہے۔

عطاء سبحانی  3 ماه پہلے

متعلقہ خبریں