مختلف شہروں میں ہائیکورٹ بنچ کے قیام کیلئے وکلاء کا احتجاج

پبلک نیوز: ہائیکورٹ بنچ کے قیام کے لیے مختلف شہروں میں وکلاء کی جانب سے ہڑتال اور احتجاجی مظاہرے جاری ہیں۔ وکلاء نے مکمل طور پر عدالتوں سے بائیکاٹ کر دیا ہے۔ جس کے باعث سائلین کو شدید مشکلات کا سامنا ہے۔ وکلا کی جانب سے مطالبہ کیا جا رہا ہے کہ فوری علاقائی بنچ تشکیل دیئے جائیں۔

تفصیلات کے مطابق عارف والا میں ہائی کورٹ بنچ کے قیام کے لیے وکلاء کی ہڑتال تیسرے روز میں دا خل ہو گئی۔ وکلاء کا کہنا ہے کہ ہائیکورٹ بنچ کے قیام تک جدوجہد جاری رکھیں گے۔ رحیم یارخان میں بھی علاقائی بنچ تشکیل نہ دینے سے ڈسٹرکٹ بار میں 3 روز سے ہڑتال جاری ہے۔ پنجاب بار کونسل نے سات روز تک عدالتی بائیکاٹ کا اعلان کیا تھا۔ پنجاب بار کونسل کی جانب سے اعلان کیا گیا تھا کہ 9 دسمبر تک صوبے بھر کی عدالتوں میں کوئی وکیل نہیں جائے گا۔

فیصل آباد کے وکلاء کی جانب سے بھی ہائی کورٹ بینچ کے قیام کے لیے احتجاج جاری ہے۔ عدالتوں کی تالابندی اور احتجاج کا سلسلہ 24ویں روز میں داخل ہوگیا جبکہ وکلاء نے علی الصبح عدالتوں کی نئے سرے سے تالا بندی کردی۔ وکلاء کا کہنا ہے کہ اگر ڈرانے دھمکانے کی کوشش کی گئی تو احتجاج میں مزید شدت آئے گی۔

گوجرانوالہ میں ہائیکورٹ بینچ کے قیام کے لیے وکلاء کی ہڑتال کو 22 روز مکمل ہو گئے ہیں۔ ڈسٹرکٹ بار ایسوسی ایشن کی اپیل پر ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن جج انسدادِ دہشت گردی سمیت پچاس سے زائد عدالتوں کی تالہ بندی کی گئی ہے جبکہ وکلاء نے تحصیل آفس کمپلیکس کی تالہ بندی بھی کر دی ہے۔

حارث افضل  1 ہفتے پہلے

متعلقہ خبریں