سندھ بھر کے سرکاری اسپتالوں کے ڈاکٹرز نے او پی ڈیز میں کام بند کا دیا

کراچی (اوسامہ عتیق) سندھ بھر کے سرکاری ہسپتالوں کے ڈاکٹرز پھر احتجاج پر آ گئے، او پی ڈیز میں کام بند کر دیا، طبی سہولیات نہ ملنے پر مریض خوار ہو گئے۔

 

انسانی مسیحاوں نے ایک بار بھر او پی ڈیز میں کام بند کر دیا اور تنخواہیں اور الاونسز میں اضافہ کا مطالبہ کر دیا اور مطالبات کی منظوری کے لیے او پی ڈی کو تالے لگا دیئے اور احتجاج ریکارڈ کروایا۔

 

دوسری طرف علاج کے طالب مریضوں کا رش لگ گیا دور دراز علاقوں سے آئے مریضوں کا کہنا ہے کہ کوئی سننے والا نہیں حکومت اور ڈاکٹرز کی خود غرضی میں ہم پس رہے ہیں۔

 

مریضوں کا علاج اور ان کی جان بچانے والے ڈاکٹرز کی ہڑتال سے جناح، سول اور ڈسٹرکٹ ہسپتالوں میں مریضوں کا رش لگ گیا ہے اور طبی سہولیات نہ ملنے سے مریض رل گئے ہیں۔

 

ہڑتال سے جہاں بروقت ادویات نہیں مل رہیں وہیں کئی آپریشن بھی نہ ہونے سے مریضوں کی جان کو شدید خطرات بھی لاحق ہیں مریضوں کی بڑی تعداد او پی ڈی کے باہر رلتی رہی۔

 

ینگ ڈاکٹرز اسوسی کے نائب صدر کا کہنا تھا کہ کئی سالوں سے حکومت سے رجوع کر رہے ہیں عوام کی مشکلات کی ذمہ دارر حکومت ہے۔ تمام اسپتالوں میں اوپی ڈی تین دن تک بند رہے گی۔ مطالبات منظور نہ ہونے پر احتجاج کا دارہ وسیع کریں گے جبکہ ایمرجنسی کسی صورت بند نہیں ہوگی۔

حارث افضل  3 ہفتے پہلے

متعلقہ خبریں