شمالی وزیرستان میں پیش آنیوالے حالیہ واقعات سے متعلق سوالات اور ان کے جوابات

شمالی وزیرستان میں پیش آنے والے حالیہ واقعات سے متعدد سوالات پیدا ہوئے اور پھر ان کے جوابات بھی ملے۔ کل ملا کر نتیجہ یہ بنتا ہے کہ ملک دشمنوں سے آہنی ہاتھوں سے نمٹنا ہی مسئلہ کا حل ہے۔

حالیہ اور گزشتہ ماہ میں باڑ لگانے والے اہلکاروں اور چیک پوسٹوں پر حملے یا تو افغان علاقوں سے کیے جاتے رہے یا وہاں سے ان کی سہولت کاری کی گئی۔ جب سکیورٹی فورسز نے قبائلی علاقوں میں ہونے والے حالیہ حملوں میں مشتبہ افراد کو گرفتار کیا تو پی ٹی ایم کی جانب سے عوام کو مشتعل کیا گیا اور فوج پر حملوں کے لیے اکسایا گیا۔

پی ٹی ایم کی ان سرگرمیوں کو افغان حکومت اور ایجنسیوں کے اہلکار شہ دیتے رہے۔

ان واقعات کے بعد محسن داوڑ سے متعلق متعدد سوالا ت پیدا ہوئے۔ مثلاً یہ کہ پشتونوں کا نمائندہ محسن داوڑ یا قومی اور صوبائی اسمبلی میں بیٹھے پشتون ارکان؟ امن کے قیام کے بعد دنیا پاکستانی فوج کی معترف، محسن داوڑ مخالف کیوں؟ محسن داوڑ کے فوجی حملوں میں ملوث عناصر کو چھڑانے کے پیچھے مقاصد کیا تھے اور یہ بھی کہ این ڈی ایس کا چیف محسن داوڑ کا حمایتی کیوں؟ آرٹیکل پانچ کے تحت ہر شہری پاکستان کا وفادار، محسن داوڑ لر اور بر کا حامی کیوں؟ محسن داوڑ کا افغانستان اور بیرون ممالک سے مدد لینے کا کیا مقصد؟ غیر ملکی میڈیا بھی امن کی بجائے محسن داوڑ کو ہی کوریج کیوں دیتا ہے؟

خر کمر پوسٹ واقعہ پیش آنے کے بعد محسن داوڑ نے تقاریر میں پاک فوج کی چیک پوسٹیں ختم کرنے اور فوج کے قبائلی علاقوں سے نکل جانے کی بات کی اس طرح کالعدم تحریک طالبان اور پی ٹی ایم کے مطالبات ایک ہی ہو گئے اور ان میں سے بہت سے سوالات کے جواب بھی مل گئے۔

سارے واقعات سے یہ نتیجہ نکلتا ہے کہ دہشت گردی کرنے والے دیگر گروہوں کی طرح سیاست کی آڑ میں ملک دشمن سرگرمیوں میں ملوث تنظیموں سے بھی مذاکرات کا کوئی فائدہ نہیں اور اب وقت آچکا ہے کہ سب ملک دشمن عناصر سے آہنی ہاتھوں سے نمٹا جائے۔

احمد علی کیف  2 ماه پہلے

متعلقہ خبریں