پنجاب فوڈاتھارٹی لاہورکو ملاوٹ زدہ دودھ کی سپلائی سے پاک کرنے میں ناکام

لاہور(پبلک نیوز) پنجاب فوڈ اتھارٹی بھی لاہور کو ملاوٹ زدہ دودھ سے پاک کرنے میں ناکام ہے، روزانہ لاکھوں لیٹر ناقص، ملاوٹ زدہ اور مضرصحت دودھ شہربھر میں سپلائی کیا جاتا ہے مگر اس ضمن میں کوئی ٹھوس اقدامات نہیں کئے گئے۔

 

پنجاب فوڈ اتھارٹی بھی لاہور کو ملاوٹ زدہ دودھ سے پاک کرنے میں ناکام ہے۔ پاوڈر، کیمیکل اور دیگر اجزاء سے مصنوعی تیار کردہ لاکھوں لیٹر ملاوٹی دودھ روزانہ کی بنیاد پر شہر میں با آسانی سپلائی کیا جاتا ہے۔ ڈی جی فوڈ اتھارٹی کا کہنا ہے کہ ناقص دودھ کی روک تھام کے لیے جامع پالیسی پر عمل کر رہے ہیں۔ روزانہ کی بنیاد پر کارروائیوں سے دودھ میں ملاؤٹ کرنے والے مافیا کے خاتمے میں مدد مل رہی ہے۔

 

صوبے بھر میں کریک ڈاون کے ساتھ ساتھ پاسچرائزیشن کا قانون لاگو کرنے پر بھی کام کر رہے ہیں۔ پنجاب فوڈ اتھارٹی کی کارروائیاں اپنی جگہ، مگر شہر میں مضر صحت ملاوٹی دودھ فروخت کرنے والوں کا راج ہے۔ زندہ دلان کے شہرلاہور کو ملاوٹی دودھ سے کب پاک کیا جائے گا۔ اس کا جواب کسی محکمے اور وزارت کے پاس نہیں۔

 

دوسری جانب ضلعی انتظامیہ نے شہر میں مویشی پالنے پر پابندی عائد کر رکھی ہے۔ مویشی اور ڈیری فارمز شہر سے دور دیہاتوں اور قصبوں میں منتقل کر دیے گئے، تاہم شہر کو دودھ کی سپلائی کا کوئی میکنزم نہیں ہے۔ شہر میں روزانہ دو سے تین لاکھ لیٹر دودھ کی ضرورت ہے جبکہ دور دراز علاقوں سے دودھ کی لاہور سپلائی کے وجہ سے مانگ پوری نہیں ہوسکتی۔

 

ڈیری فارمز شہر سے دو سو کلو میٹر دور منتقل کر دیے گئے ہیں۔ سپلائرز منی ٹرکوں اور ڈرموں میں دودھ بھر کر شہر لاتے ہیں جس سے اکثر دودھ خراب ہو جاتا ہے۔ ملک بھر میں الٹراہیٹ ٹریٹڈ یعنی یو ایچ ٹی دودھ کی شکل میں سالانہ 4 کروڑ 60لاکھ ٹن دودھ پیدا کیا جاتا ہے مگر ناقص حکمت عملی کے باعث مانگ پوری نہیں ہو پاتی۔

 

ضلعی انتظامیہ لاہور نے خالص دودھ کے نرخ فی لیٹر 70روپے مقرر کئے ہیں، مگر شہر میں کہیں بھی سرکاری ریٹ پر خالص دودھ میسر نہیں۔ ڈیری فارمز شہر سے دور دیہات اور قصبوں میں ہونے کی وجہ سے معیاری دودھ کا شہر میں پہنچنا مشکل ہے اور یہی وجہ ہے کہ معیاری دودھ مقررکردہ نرخوں میں دستیاب ہے نا ہی دودھ کی طلب کو پورا کیا جا سکتا ہے۔

 

شہریوں کا کہنا ہے کہ سرکاری ریٹ پر خالص دودھ نہیں ملتا۔ مجبورا کم ریٹ پر غیر معیاری دودھ استعمال کر نا پڑتا ہے۔ دودھ ہر گھر کی ضرورت ہے۔ شہر میں دودھ کی رسدپوری ہے نا سرکاری ریٹ پر معیاری دودھ کی دستیابی، یہ مسلہ کب حل ہو گا اس بارے کچھ بھی کہنا قبل از وقت ہے۔

عطاء سبحانی  3 ہفتے پہلے

متعلقہ خبریں