رانا ثناء اللہ کو 14 روزہ جوڈیشل ریمانڈ پر کیمپ جیل بھیج دیا گیا

لاہور(شاکر محمود اعوان) مسلم لیگ ن پنجاب کے صدر رانا ثناء اللہ کو چودہ روزہ جوڈیشل ریمانڈ پر جیل منتقل کر دیا گیا۔ اینٹی نارکوٹکس فورس نے منشیات رکھنے کے الزام میں گذشتہ روز انہیں گرفتار کیا تھا۔

 

منشیات رکھنےاور منشیات فروشوں سے تعلقات کے الزام میں گرفتار، مسلم لیگ ن پنجاب کے صدر رانا ثناء اللہ کو لاہور کی مقامی عدالت نے چودہ روزہ جوڈیشل ریمانڈ پر جیل بھیج دیا۔ انسداد منشیات فورس نے رانا نثاء اللہ اور دیگرملزموں کو جوڈیشل مجسٹریٹ احمد وقاص کی عدالت میں پیش کیا۔ اے این ایف نے عدالت کو بتایا کہ رانا ثنا اللہ اور دیگر افراد سے گزشتہ روز منشیات برآمد ہوئی، جس پر انہیں حراست میں لے کر ان کیخلاف مقدمہ درج کر لیا گیا۔

عدالت نے تمام ریکارڈ کا جائزہ لینے کے بعد رانا نثاء اللہ،عامرفاروق، سبطین، اکرم اور محمد عثمان سمیت دیگر ملزموں کو جوڈیشل ریمانڈ پر جیل بھیج دیا اور ہدایت کی ریمانڈ ختم ہونے پر ملزمان کو عدالت پیش کیا جائے۔ عدالت نے مقدمہ کا چالان بھی پیش کرنے کا حکم بھی دیا۔ رانا نثاء اللہ کی ضلع کچہری میں پیشی پر سیکیورٹی کے سخت انتظامات کیے گئے، اس موقع پر مسلم لیگ ن سے وابستہ وکلا کی بڑی تعداد موجود تھی جو نعرے بازی کرتی رہی۔ کمرہ عدالت میں اے این ایف اور مسلم لیگ ن کے وکلاء کے دھکم پیل بھی ہوئی اور مسلم لیگ ن کے وکلا نے رانا نثا اللہ کی گرفتاری کی مذمت کی۔ رانا ثناءاللہ پر اینٹی نارکوٹکس ایکٹ کے تحت 21 کلو منشیات برآمدگی کا مقدمہ درج کیا گیا۔

عطاء سبحانی  3 ماه پہلے

متعلقہ خبریں