زعیم حسین قادری کیخلاف شواہد نہ ملنے پر انکوائری بند کرنے کی سفارش

لاہور(پبلک نیوز) سابق صوبائی وزیر زعیم حسین قادری کےلیے خوشخبری،.نیب لاہور نے سابق صوبائی وزیر زعیم قادری کیخلاف زمینوں پر قبضے اور آمدن سے زائد اثاثوں کے الزامات پر انکوائری بند کرنے کی سفارش کر دی۔

 

سابق صوبائی وزیراوقاف کے خلاف نیب لاہور میں ہونے والی 2 انکوائریز بند کرنے کی سفارش کر دی۔ نیب ذرائع کے مطابق دوران تحقیقات سابق وزیر کے خلاف ملوث ہونے کے تاحال شواہد نہیں ملے ہیں۔ زعیم قادری پرپنجاب سمال انڈسٹری کواپریٹو ایمپلائز ہاؤسنگ سوسائٹی سے مبینہ طور پر غیر قانونی فوائد لینے کا الزام تھا۔

 

چیئرمین نیب نے سابق صوبائی وزیر زعیم قادری کے خلاف 8 جنوری 2018 کو مختلف شکایات ملنے پر تحقیقات کا حکم دیا تھا۔ نیب لاہور نے زعیم قادری کو تحقیقات کے لیے 3 مرتبہ طلب کیا۔ زعیم حسین قادری نے نیب کی جانب سے ملنے والے سوالنامے کا جواب مئی 2018 میں جمع کروا دیا ہے۔

 

نیب ذرائع کے مطابق ریجنل بورڈ، میٹنگ میں پراسکیوشن ونگ نے زعیم حسین قادری کیخلاف شواہد نہ ملنے پر انکوائری بند کرنے کی سفارش کی ہے۔ زعیم قادری پر زمینوں پر قبضے، اختیارات کا ناجائز استعمال اور آمدن سے زائد اثاثوں کے الزامات تھے، ریجنل آفس نے چیرمین نیب جسٹس جاوید کو فائل بھیجتے ہوئے انکوائری بند کرنے کی سفارش کی ہے۔

عطاء سبحانی  2 ہفتے پہلے

متعلقہ خبریں