کپتانی کیلئے گرین سگنل پہلے بھی تھا، امید ہے آگے بھی ہو گا: سرفراز احمد

کراچی(پبلک نیوز) قومی کرکٹ ٹیم کے کپتان سرفراز احمد کا کہنا ہے کہ وکٹ کے پیچھے بولنا میری عادت ہے، مقصد ٹیم کا حوصلہ بڑھانا ہوتا ہے، غلطی تسلیم کی پھر بھی ایک لفظ کا ایشو بنایا گیا، کوشش کروں گا آئندہ ایسا نہ ہو، ورلڈ کپ میں کپتانی کیلئے پرامید ہوں۔

 

کراچی میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے قومی کرکٹ ٹیم کے کپتان سرفراز احمد کا کہنا ہے کہ ایک لفظ پر پورا ایشو بن گیا، انشاء اللہ کم بیک ہو گا، کپتانی کا گرین سگنل پہلے بھی تھا اور آگے بھی ہو گا۔ آئی سی سی پر کوئی غصہ نہیں اگر ہوتا تو اُن پر ہوتا جنہوں نے چیزوں کو اچھالا ہے، وکٹ کے پیچھے بولتے رہنا میری عادت ہے، اسے بدلنا مشکل ہے، بولنے کا مقصد ٹیم کا حوصلہ بڑھانا ہوتا ہے۔

 

قومی کرکٹ ٹیم کے کپتان کا کہنا تھا کہ ایک لفظ پر پورا ایشو بن گیا، جنوبی افریقی کھلاڑی فیلوکوائیو کو لگتا ہے کہ اس کی والدہ کو میں نے کچھ بولا، جس پر میں نے معذرت کی اور میں نے اسے سمجھایا کہ کچھ غلط نہیں کہا، ہمارے معاشرے میں ماں کی دعا کی اہمیت ہے۔ چار میچز کیلئے پابندی لگی تو میرا وہاں رکنا بے مقصد تھا، میری والدہ کا ردعمل دیتے ہوئے کہنا تھا کہ اتنی سی بات پر میرے بچے کو اتنا برا بھلا کہہ دیا۔

 

سابق کرکٹر شعیب ملک کی طرف سے کی جانے والی تنقید کا جواب دیتے ہوئے کہا کہ شعیب اختر کیلئے میرے دل میں کوئی خلش نہیں ہے، انہیں اگر کچھ برا لگا ہے تو وہ بھی معاف کر دیں۔ بہترین 5 فاسٹ بولر ورلڈ کپ میں جائیں گے اور جنید خان بھی ورلڈ کپ کے ممکنہ کھلاڑیوں میں شامل ہو گے۔ مثبت سوچ رہا ہوں اور کپتانی کا فیصلہ کرکٹ بورڈ کو کرنا ہے۔

عطاء سبحانی  2 ماه پہلے

متعلقہ خبریں