آئل تنصیبات پر حملوں میں بلا شبہ ایران ملوث ہے، سعودی عرب

 

پبلک نیوز: سعودی عرب نے تیل تنصیبات پر حملے میں ایران کو ذمہ دار قرار دے دیا ہے۔ کرنل ترکی المالک نے کہا ہے کہ حملوں میں استعمال ہونے والے ڈرون اور میزائل حملوں کی باقیات حاصل کر لی گئیں ہیں۔

 

سعودی عرب کی وزارت دفاع کے مطابق عبقیق اور خریص میں آرمکو کمپنی کی تیل تنصیبات پر حملوں میں ایران کے ملوث ہونے کےنا قابل تردید ثبوت موجود ہیں۔ آئل تنصیبات پر ہونے والے حملے شمال کی طرف سے ہوئے، حملوں میں بلا شبہ ایران ملوث ہے۔

 

کرنل ترکی المالک کا پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہنا تھا کہ حملوں میں استعمال ہونے والے ڈرون اور میزائل حملوں کی باقیات حاصل کر لی ہیں۔ حملے کے لیے ٹوٹل 18 ڈرون اور سات میزائلوں کو استعمال کیا گیا۔ یہ حملے شمال کی طرف سے کیے گئے۔ اب اس مقام کو ڈھونڈ رہے ہیں جہاں سے یہ حملے ہوئے۔

 

ترکی المالک کا کہنا تھا کہ میزائل حملوں نے ٹارگٹ پر گرنے سے قبل 700 کلو میٹر کا سفر طے کیا۔ اس کا مطلب ہے کہ یہ حملے یمن کی طرف سے  نہیں کیے گئے۔ جس طرح کے ہتھیار سعودی عرب پر حملے کے دوران استعمال کیے گئے۔

 

المالک کا مزید کہنا تھا کہ یہ ہتھیار ایرانی حکومت استعمال کرتی ہے۔ اکثر یہ ہتھیار ایران کے پاسداران انقلاب کو بھی استعمال کرتے دیکھا گیا ہے۔ حملوں کے مجرم کی جلد شناخت کر لی جائے گی اور ان کا سخت احتساب کیا جائے گا۔

احمد علی کیف  3 ہفتے پہلے

متعلقہ خبریں