سپریم کورٹ: لاہور اورنج لائن ٹرین منصوبہ مقررہ مدت میں مکمل کرنیکا حکم

اسلام آباد (پبلک نیوز) سپریم کورٹ نے لاہور اورنج لائن میٹرو ٹرین منصوبے کو مقررہ مدت میں مکمل کرنے کا حکم دے دیا۔ فاضل عدالت نے تعمیرات اور رقوم کی ادائیگی پر تنازع کے حل کے لیے ٹی او آرز بنانے کی بھی ہدایت کی ہے۔

تفصیلات کے مطابق چیف جسٹس ثاقب نثار کی سربراہی میں تین رکنی بنچ نے سماعت کی۔ نجی کمپنی کے وکیل نعیم بخاری نے عدالت کو بتایا کہ ان کے مؤکل اپنا کام وقت پر مکمل کرنا چاہتے ہیں۔ ایل ڈی اے سات ماہ سے ان کے مؤکل کے واجبات ادا نہیں کر رہا۔

نعیم بخاری نے کہا کہ ایل ڈی اے سمجھ رہا ہے چیف جسٹس کے ریٹائر ہونے پر معاملہ دب جائے گا۔ نعیم بخاری نے عدالت کو آگاہ کیا کہ طے شدہ نرخوں میں کچھ کمپینوں کی جانب سے تبدیلی کی گئی ہے۔

ایل ڈی اے حکام نے عدالت کو بتایا کہ رقوم کی ادائیگی کی منظوری نیسپاک نے دینی ہے۔ جس پر نیسپاک حکام کا یہ مؤقف سامنے آیا کہ تعمیرات میں کچھ تنازع ہے۔ چیف جسٹس نے ریمارکس دیئے کہ سب سے اہم مسئلہ پراجیکٹ کے انچارج سبطین حلیم کی مدت ملازمت میں توسیع کا تھا جو توسیع کے بعد حل ہو چکا ہے۔

کنٹریکٹر کے وکیل شاہد حامد نے عدالت سے استدعا کی کہ سپریم کورٹ کے کسی ریٹائرڈ جج یا چیف جسٹس کو ثالث بنا دیا جائے۔ چیف جسٹس نے ٹی آو آرز بنانے کی ہدایت کی تا کہ ثالث کو بھجوائی جا سکیں۔

چیف جسٹس نے ریمارکس دیئے کہ منصوبہ مقررہ مدت میں مکمل ہونا چایئے۔ بعد ازاں کیس کی سماعت غیر معینہ مدت کے لیے ملتوی کردی گئی۔

احمد علی کیف  1 ہفتے پہلے

متعلقہ خبریں