سپریم کورٹ: ڈی پی او پاکپتن تبادلہ کیس 17سمتبر کو سماعت کیلئے مقرر

اسلام آباد (پبلک نیوز) ڈی پی او پاکپتن کے تبادلہ  کا معاملہ، سپریم کورٹ نے کیس سماعت کے لیے مقرر کر دیا، چیف جسٹس کی سربراہی میں تین رکنی بینچ 17 ستمبر کو سماعت کرے گا، خاور مانیکا، سابق آئی جی پنجاب کلیم امام، ایڈووکیٹ جنرل پنجاب سمیت دیگر فریقین کو نوٹس جاری کر دئیے گئے۔ 

چیف جسٹس میاں ثاقب نثار کی سربراہی میں تین رکنی بینچ 17 ستمبر کو ڈی پی او پاکپتن کی تبدیلی سے متعلق کیس کی سماعت کرے گا۔ عدالت نے خاور مانیکا ،سابق آئی جی پنجاب کلیم امام ، ایڈووکیٹ جنرل پنجاب، آر پی او ساہیوال،   سابق ڈی پی او پاکپتن،وزیر اعلیٰ پنجاب کے پی ایس او ، سی ایس او سمیت احسن جمیل  گجر کو بھی نوٹس جاری کر دیا ہے۔

 عدالت کے حکم پر سابق آئی جی پنجاب کلیم امام نے سپریم کورٹ میں تحقیقاتی رپورٹ بھی جمع کرائی ہے ۔ رپورٹ کے مطابق سابق ڈی پی او پاکپتن رضوان گوندل نے 5 اگست کو مانیکا فیملی کے ساتھ پولیس اہلکاروں کے ناروا سلوک سے متعلق نہ تو اعلیٰ حکام کو آگاہ کیا اور نہ ہی کوئی کارروائی کی۔ وزیر اعلی پنجاب کا ڈی پی او کو وزیراعلی ہاؤس میں بلانے کا مقصد معاملہ کو حل کرانا تھا۔

واضح رہے کہ خاتون اول بشری بی بی کے سابقہ شوہر خاور فرید مانیکا کو روکنے پر ایکشن متعلقہ پولیس اہلکاروں کے خلاف کارروائی نہ کرنے پر ڈسٹرکٹ پولیس افسر (ڈی پی او) رضوان گوندل  کا تبادلہ کر دیا گیا تھا۔ آئی جی پنجاب نے ڈی پی او پاکپتن رضوان گوندل کے تبادلے کے احکامات جاری کیے تھے۔

احمد علی کیف  2 ماه پہلے

متعلقہ خبریں