پاکستان ٹیم کا پیس اٹیک، ٹیم منیجمنٹ، سلیکشن کمیٹی کی ناکامی کا منہ بولتا ثبوت

لاہور (پبلک نیوز) ایک دور تھا جب پاکستان کرکٹ اپنے پیس اٹیک کے باعث دنیا بھر میں ممتاز تھی، آج بھی فاسٹ باؤلرز کے حوالے سے پاکستان کے پاس ٹیلنٹ کی کمی نہیں، لیکن سلیکشن کمیٹی اور ٹیم منیجمنٹ کی نااہلی کے باعث ورلڈ کپ جیسے اہم ایونٹ میں پاکستانی باؤلرز کا کمبی نیشن نہیں بن پایا۔ ورلڈ کپ میں 14 روز باقی ہیں لیکن اب تک فیصلہ نہیں ہو سکا کہ ٹیم میں کون کھیلے گا کون نہیں۔

 

پاکستان ورلڈ کپ میں کس باؤلر کو کھلائے گا کس کو باہر بٹھائے گا سلیکشن کمیٹی اور ٹیم منیجمنٹ آمنے سامنے آ گئے۔ ذرائع کے مطابق پی سی بی کی سلیکشن کمیٹی فاسٹ بولر محمد عامر کےحوالے سے ٹیم انتظامیہ کی حکمت عملی پرسخت خفا ہے۔ انگلینڈ کے خلاف سیریز میں موجودہ بولنگ اٹیک کی کارکردگی کو دیکھنے کے بعد اب محمد عامر کی شمولیت بہت ضروری سجھی جارہی ہے لیکن سلیکٹرز کی خواہش ہے کہ کوئی بھی فیصلہ کرنے سے پہلے محمد عامر کی فٹنس اور فارم کو ایک بار ضرور پرکھ لیا جائے۔

 

قومی ٹیم تین ہفتوں سے انگلینڈ میں موجود ہے لیکن ابھی تک محمد عامر ایک بھی گیند نہیں پھینک سکے۔ اس ساری صورت حال نے سلیکٹرز کو پریشان کرنے کے ساتھ ورلڈکپ میں فاسٹ بولر کی شمولیت پر بھی سوالیہ نشان لگا دیا ہے۔

 

وہاب ریاض، محمد عامر، حسن علی، جنید خان، عثمان شنواری، شاہین شاہ آفریدی، محمد حسنین، راحت علی، محمد عباس، رمان رئیس اور عمید آصف جیسے فاسٹ باؤلرز کے ہوتے ہوئے ورلڈ کپ کے لیے مناسب کمبینشن تلاش نہ کر سکنا پی سی بی انتظامیہ اور ٹیم سلیکشن کی بڑی ناکامی ہے۔ ورلڈ کپ شروع ہونے میں اب صرف 14 دن باقی ہیں کس باؤلر کو کھلانا ہے کس کو باہر بٹھانا ہے اس کا فیصلہ کون کب اور کس بنیاد پر کرے گا اس سوال کا جواب شاید ورلڈ کپ کے بعد کوئی جوائنٹ انویسٹی گیشن ٹیم ہی دے گی۔

حارث افضل  1 ہفتے پہلے

متعلقہ خبریں