پاکستان سعودی عرب کے درمیان کوآرڈی نیشن کونسل بنانے کا فیصلہ کیا گیا ہے: شاہ محمود قریشی

اسلام آباد (پبلک نیوز) وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے کہا ہے کہ پاک سعودی عرب میں کو آرڈینیشن کونسل بنانے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔ وزیر اعظم پاکستان اور سعودی ولی عہد کونسل کی سربراہی کریں گے۔

 

اسلام آباد میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی کا کہنا تھا کہ گذشتہ حکومت میں پاک سعودی تعلقات میں سرد مہری رہی۔ دونوں ممالک میں دوریاں پیدا ہو گئی تھیں۔ وزیر اعظم کے دو دورروں کے بعد تعلقات بہتر ہوئے۔ تیس سال بعد سعودی ولی عہد دورہ کر رہے ہیں۔ سعودی عرب نے کھل کر مدد کی۔ تین ارب ڈالر توازن ادائیگی کی بہتری کے لیے دیا۔ تین ارب ڈالر کا ادھار تیل دیا۔

 

شاہ محمود قریشی کا کہنا تھا کہ وزیر اعظم نے دورے کے دوران کہا پاک سعودی تجارتی تعلقات میں اضافہ چاہتے ہیں۔ وزیر اعظم کے دوروں سے گلف ممالک کے ساتھ تعلقات بڑھے۔ پاک سعودی عرب میں کو آرڈینیشن کونسل بنانے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔ وزیر اعظم پاکستان اور سعودی ولی عہد کونسل کی سربراہی کریں گے۔

 

 

ان کا کہنا تھا کہ سعودی عرب سے ہمارا مضبوط تعلق بننے جارہا ہے۔ سیکرٹری کانفرنس میں شرکت کے لیے کل میونخ روانہ ہوں گا۔ 30 سال بعد عمران خان کو ریاستی دورے پر سعودی عرب نے بلایا۔ پہلے حکمران سعودی عرب جاتے رہے مگر وہ اسٹیٹ وزٹ نہیں تھے۔ پاکستان اور سعودی عرب معاشی معاون بننے جا رہے ہیں۔ پاکستان اور دیگر عرب ممالک کے درمیان بھی تجارتی پارٹنرشپ قائم ہورہی ہے۔

 

وزیر خارجہ کا کہنا تھا کہ سعودی عرب نے پاکستان کی معاشی حالت زار کا جائزہ لینے کے لیے ایڈوانس ٹیمیں پاکستان بھجوائی۔ پاکستان کی تاریخ میں اتنا بڑا سعودی وفد پاکستان نہیں آیا ہوگا۔ سعودی وفد میں شاہی خاندان، وزرا اور بڑے بڑے سرمایہ کار آرہے ہیں۔ آٹھ ایم او یوز دستخط ہونے کے بعد عمل کے لیے کوارڈینیشن کونسل بنا رہے ہیں۔ متعلقہ وزرا کو اس کونسل میں نمائندگی دی جائے گی۔ یہ ایم او یوز خالی باتیں نہیں ہوں گی۔

 

ان کا کہنا تھا کہ مجھے کل صبح جرمنی سیکورٹی کانفرس میں شرکت کے لیے روانہ ہونا ہے۔ جرمنی میں افغان صدر اشرف غنی، روسی وزیر خارجہ سے ملاقاتیں بھی طے ہوئی ہیں۔ افغان صدر سے ملاقات میں افغان امن عمل پر بات ہوگی۔

حارث افضل  5 روز پہلے

متعلقہ خبریں