بھارتی سفیر کو پاکستان سے جانا پڑے گا، شاہ محمود قریشی

 

اسلام آباد (پبلک نیوز) وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے کہا ہے کہ پاکستان بھارت سے اپنا سفیر واپس بلائے گا۔ بھارتی سفیر کو پاکستان سے جانا پڑے گا۔ مودی سرکار نے 5 اگست کے اقدام سے اپنے پاؤں پر کلہاڑی ماری۔ مودی نے جواہر لعل نہرو کی جمہوری سوچ میں چھرا گھونپا۔ بھارت کے ساتھ سفارتی تعلقات کم کر نے کا فیصلہ کیا ہے۔ پاکستانی قوم 14 اگست کو کشمیریوں سے یکجہتی کے طور پر منائے گی۔

 

پارلیمنٹ کے مشترکہ اجلاس سے اظہار خیال کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ پوری پاکستانی قوم اضطراب کی کیفیت میں ہے۔ مودی سرکار نے کشمیر کا مسئلہ مزید پیچیدہ بنا دیا۔ بھارت کے غیر قانونی اقدام کی پاکستان نے بھرپور مذمت کی۔ پاکستان بھارت سے اپنا سفیر واپس بلائے گا۔ بھارتی سفیر کو پاکستان سے جانا پڑے گا۔ مقبوضہ کشمیر کی سیاسی قیادت نے بھی بھارتی اقدام کی مذمت کی۔ بھارت کی مکروہ حرکت نے مسئلہ کشمیر کو عالمی مسئلہ بنا دیا۔ کشمیر کا بچہ بچہ پاکستان اورمسلم امہ کی طرف دیکھ رہا ہے۔

 

شاہ محمود قریشی کا کہنا تھا کہ بھارت کی ہمیشہ سے کوشش رہی کشمیر کے مسئلے کو دبایا جائے۔ چدم برم نے 5 اگست کو بھارت کا سیاہ ترین دن قرار دیا۔ چدم برم نے کہا مودی سرکار یہ فیصلہ بہت بڑی حماقت تھی۔ بھارت میں اب نئی قانونی بحث چھڑ گئی ہے۔ مودی سرکار نے 5 اگست کے اقدام سے اپنے پاؤں پر کلہاڑی ماری۔ مودی نے جواہر لعل نہرو کی جمہوری سوچ میں چھرا گھونپا۔

وزیر خارجہ کا کہنا تھا کہ کشمیریوں پر کلسٹر بموں کا استعمال پہلے کبھی نہیں ہوا۔ نہتے لوگوں پر کلسٹر بم حملے کسی صورت قبول نہیں۔ مشترکہ اجلاس بلانے کا مقصد کشمیریوں کے ساتھ یکجہتی تھا۔ کشمیریوں کو بتانا تھا کہ پورا پاکستان اورعوام آپ کے ساتھ ہیں۔ حکومت اور اپوزیشن کو کشمیر کے مسئلے پر یکجا ہونا ہوگا۔ ملکی مفادات کو سامنے رکھتے ہوئے سعودی عرب سے واپس آیا۔

 

ان کا مزید کہنا تھا کہ قومی سلامتی کمیٹی کے اجلاس میں 5 بڑے فیصلے کیے گئے۔ بھارت کے ساتھ سفارتی تعلقات کم کر نے کا فیصلہ کیا ہے۔ بھارت سے دو طرفہ تجارت معطل کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ مسئلہ کشمیر کو اقوام متحدہ لے جانے کا فیصلہ کیا ہے۔ پاکستانی قوم 14 اگست کو کشمیریوں سے یکجہتی کے طور پر منائے گی۔ دو طرفہ تعلقات کا ازسرنو جائزہ لے کر کم کیا جائے۔

 

احمد علی کیف  3 ماه پہلے

متعلقہ خبریں