صاف پانی کمپنی اسکینڈل، شہباز شریف تفتیشی ٹیم کو مطمئن کرنے میں ناکام

لاہور(پبلک نیوز)آشیانہ اقبال میں زیر حراست سابق وزیراعلی پنجاب شہباز شریف صاف پانی کمپنی اسکینڈل میں بھی مشکلات کا شکار ہیں۔ نیب کی اختیارات کے ناجائز استمعال کرتے ہوئے 116واٹر فلٹریشن پلانٹس کا ٹھیکہ مہنگے داموں دینے کی منظوری کے الزام پر تحقیقات۔ 

 

سابق وزیر اعلی پنجاب شہباز شریف کے ستارے گردش سے باہر نہ آسکے، اشیانہ اقبال میں گرفتار ہونے والے شہباز شریف صاف پانی کمپنی اسکینڈل میں بھی مشکلات کا شکار ہیں، صاف پانی کمپنی میں شہباز شریف تین بار نیب میں پیشی بھگت چکے تاہم تفتیشی ٹیم کو مطمئن کرنے میں ناکام رہے۔

 

نیب زرائع کے مطابق صاف پانی کمپنی اسکینڈل میں شہباز شریف پر الزمات ہیں کہ انہوں نے اختیارات کے ناجائز استمعال کرتے ہوئے 116واٹر فلٹریشن پلانٹس کا ٹھیکہ مہنگے داموں دینے کی منظوری دی۔ اسی طرح جو پلانٹس 50کڑور کے لگنے تھے وہ ڈیرھ ارب کے اخراجات سے لگائے گئے۔

 

شہباز شریف نے صرف کنسلٹنسی کی مد میں تین ارب روپے خرچ کیے لیکن نتائج صفر رہے جبکہ شہباز شریف پر یہ بھی الزم ہے کہ صاف پانی بورڈ کی میٹنگ دبئی میں ہوتی رہی جہاں من پسند افراد کو نوازا گیا۔ دوسری جانب صاف پانی کمپنی میں زیر حراست سابق سی ای او وسیم اجمل کا بیان بھی شہباز شریف کے لیے وبال جان بنا ہوا ہے، جس میں انہوں نے صاف پانی اسکینڈل میں شہباز شریف کے براہ راست ملوث ہونے کی تصدیق کی ہے۔

عطاء سبحانی  2 ماه پہلے

متعلقہ خبریں