افغان کرکٹ ٹیم میں شامل کھلاڑی پاکستان میں پلے بڑھے ہیں: شہریار آفریدی

اسلام آباد (پبلک نیوز) وزیر مملکت برائے سرحدی امور (سیفران) شہریار آفریدی نے کہا ہے کہ افغان کابینہ میں 22 کے قریب وزرا پاکستان کے کیمپوں میں پلے۔ افغان کرکٹ ٹیم میں شامل کھلاڑی پاکستان میں پلے بڑھے۔ افغانستان میں بدامنی سے سب سے زیادہ نقصان پاکستان نے اٹھایا۔

 

شہر اقتدار میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے وزیر مملکت برائے سرحدی امور (سیفران) شہریار آفریدی کا کہنا تھا کہ 5 لاکھ افغان مہاجرین کا کوئی ڈیٹا نہیں۔ پاکستان میں 30 لاکھ سے زائد افغان مہاجرین ہیں۔ کسی بھی ملک میں مہاجرین کو کیمپوں میں رکھا جاتا ہے۔ کسی بھی سطح پر افغان مہاجرین کو تنہا نہیں چھوڑا۔ افغان کرکٹ ٹیم میں شامل کھلاڑی پاکستان میں پلے بڑھے ہیں۔ شمالی اور جنوبی وزیرستان کے بزرگوں نے اپنا خون دیا ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ گلہ شکوہ ہے تو میز پر بیٹھ کر بات کریں۔ محسن داوڑ کو آئینی ترمیم پیش کرنے کی اجازت دی گئی۔ جب وزیر داخلہ تھا تب محسن داوڑ کو اپنے ساتھ بٹھایا۔ محسن داوڑ کو قائمہ کمیٹی کا چیئرمین بنایا۔ جو بھی آئین کو چیلنج کرے گا، قانون حرکت میں آئے گا۔ ماضی کی نااہلی اور کوتاہیوں کی وجہ سے یہ دن دیکھنا پڑا۔ افغان اور سویت یونین کا خمیازہ پاکستان کو بھگتنا پڑا۔

حارث افضل  3 ماه پہلے

متعلقہ خبریں