شوبز ستاروں کا بچوں کی آگاہی سے متعلق مضمون نصاب میں شامل کرنیکا مطالبہ

کراچی (پبلک نیوز) کراچی پریس کانفرنس میں اداکارہ ماہرہ خان، کرکٹر یونس خان، زیبا بخیار شہزاد رائے کے ہمراہ موجود تھے۔ اس موقع پر ان کا کہنا تھا کہ کہ دس بچے ہر روز زیادتی کا شکار ہوتے ہیں۔ ہمیں شرم آتی ہے اس موضوع پر بات کرنے میں۔ ہمیں اب ایک ہو کر زیادتی کے خلاف آواز اٹھانی ہوگی۔

 

روشنیوں کے شہر میں کراچی پریس کلب میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے گلوکار شہزاد رائے کا کہنا تھا کہ ایک سال پہلے بھی ہم یہاں جمع ہوئے تھے۔ زینب کے واقعے پر ہم پریس کلب جمع ہوئے تھے۔ پنجاب اور کے پی کے میں بچوں کی آگاہی کے لیے نصاب میں کوئی مضمون شامل نہیں۔ گزارش کرتا ہوں بچوں سے آگاہی کے لیے نصاب میں میں ایک مضمون کو شامل کیا جائے۔

 

اس موقع پر سابق کرکٹر یونس خان کا کہنا تھا کہ پشتو میں گزارش کرتا ہوں کہ بچوں کے ساتھ زیادتی کے خلاف آواز اٹھائی جائے۔ ہمیں آواز اٹھانی چاہیے۔ ایک دوسرے کا ساتھ دینے کا وقت آگیا ہے۔ جس پاکستان کا خواب دیکھا تھا وہ پورا کر کے رہیں گے۔

 

مشترکہ پریس کانفرنس کرتے ہوئے اداکارہ زیبا بخیار کا کہنا تھا کہ میں بلوچستان سے ہوں۔ لوگ ان باتوں کو چھپا لیتے ہیں کیوں کہ انہیں اپنی بے عزتی محسوس ہوتی ہے۔ میں نے جب جب اس حوالے سے بات کرنا چاہی کہا گیا پاکستان سے باہر بات کرو۔ جو کیسز رپورٹ ہوتے ہیں وہ پتا چل جاتے ہیں باقی تو پتا بھی نہیں چلتا۔ یہ اسلامی ملک ہے کہا جاتا ہے لیکن اسلام کہاں ہے۔ والدین کو سمجھ نہیں آتا اس حوالے سے کیا بات کی جائے، لیکن اب بات کرنا پڑے گی۔

 

ان کے علاوہ اداکارہ ماہرہ خان کا اس موقع پر کہنا تھا کہ دس بچے ہر روز زیادتی کا شکار ہوتے ہیں۔ ہمیں شرم آتی ہے اس موضوع پر بات کرنے میں۔ ہمیں اب ایک ہو کر زیادتی کے خلاف آواز اٹھانی ہوگی۔ اکثر زیادتی کے واقعات گھروں میں رونما ہوتے ہیں۔ بچوں کو بولنے کا موقع دیا جائے۔ بچوں کو چپ کروانا زیادتی ہے۔ ان معاملات میں پولیس اور تمام تر اداروں کو اپنا کام ایمانداری اور تیزی سے کرنا چاہیے۔

حارث افضل  3 ہفتے پہلے

متعلقہ خبریں