سندھ اسمبلی: اپوزیشن کا گالیوں کا الزام، حکومتی ارکان کا سیٹوں پر کھڑے ہو کر احتجاج

کراچی (پبلک نیوز) سندھ اسمبلی ایک بار پھر میدان جنگ کا منظر پیش کرنے لگی۔ اپوزیشن کی جانب سے گالی کا الزام لگایا گیا تو حکومتی ارکان نے سیٹوں پر کھڑے ہوکر احتجاج کیا۔

تفصیلات کے مطابق شہر کراچی میں یخ بستہ ہواؤں کا زور ہے لیکن سندھ اسمبلی میں لو کے تھپیٹروں جیسا شور دیکھنے میں آتا ہے۔ اسمبلی ارکان نے ایوان کی روایت خوب برقرار رکھی۔  ایک دوسرے پر لعن طعن اور طنزیہ جملوں کی  بارش سے باز نہ آئے۔ کوئی چیخا کوئی چلایا تو کسی نے گالی دینے کا الزام لگایا۔

جے ڈی اے رہنما عارف جتوئی کا جیل میں وائرس پھیلنے والے وائرس کے حوالے سے کہنا تھا کہ جیلوں میں ایسا کونسا وائرس ہے کہ سیاستدان جیل جاتے ہیں تو بیمار ہو جاتے ہیں۔ وزیر صحت عذرا پیچوہو اس سوال پر سیخ پا ہو گئیں۔ ان کا کہنا تھا کہ قواعد کے تحت یہ سوال نہیں لایا جاسکتا ۔ایسا کوئی وائرس نہیں ہے۔

علاوہ ازیں عارف جتوئی نے اسپیکر کی ڈائس کے سامنے احتجاج بھی کیا۔ اسپیکر اور عارف جتوئی میں نوک جھونک بھی دیکھنے میں آئی۔ اسپیکر سندھ اسمبلی کہتے رہے کہ میں ایوان کا کسٹوڈین ہوں، فیصلہ میں کروں گا۔ میں ڈکٹیشن نہیں لیتا۔

وزیر پارلیمانی امور  گرما گرمی کے دوران لقمہ دیئے بنا نہ رہ سکے۔ مکیش چاولہ نے کہا کہ عارف جتوئی کا میڈیکل کرائیں، ان کو وائرس لگا ہے۔ جس پر اسپیکر نے کہا کہ ان کو اپنی والی گولی دے دیں تاکہ آرام آئے۔

تحریک انصاف کے ارسلان تاج نے پیپلز اراکین کے الفاظ پر برہمی کا اظہار کیا۔ اپوزیشن رکن نے وزیر پارلیمانی امور مکیش چاولہ پر گالی بکنے کا الزام لگا دیا۔ انھوں نے کہا کہ پیپلزپارٹی ارکان کیسی زبان استعمال کر رہے ہیں۔ جس پر مکیش چاولہ نے کہا کہ ریکارڈ نکلوا لیں گالی نہیں دی۔

امتیاز شیخ کا کہنا تھا کہ یہ منصوبہ بندی کے تحت ایوان کا ماحول خراب کرنا چاہتے ہیں۔ جس پر اسپیکر نے کہا کہ اس کی تحقیقات کرواتے ہیں۔

اپوزیشن لیڈر فردوس شمیم نقوی کی جانب سے بھی ایوان کا تقدس پامال کرنے پر برہمی کا اظہار کیا گیا۔ اس دوران اپوزیشن لیڈر اور وزیر بلدیات سعید غنی کے درمیان تلخ کلامی بھی ہوئی۔ فردوس شمیم نے کہا کہ کسی کو حق نہیں کہ ایوان میں گالی دے۔

سعید غنی نے کہا کہ یہ بے شرم ہیں ایوان کا ماحول خراب کرتے ہیں۔ اسپیکر سندھ نے کہا کہ میں نے کارروائی سے غیر پارلیمانی الفاظ حزف کرنے کی رولنگ دی ہے۔

احمد علی کیف  6 ماه پہلے

متعلقہ خبریں