سپریم کورٹ: نجی سکولوں کو آڈٹ اکاؤنٹس جمع کرانے کا حکم

کراچی (پبلک نیوز) سپریم کورٹ نے نجی سکولوں کو آڈٹ اکاؤنٹ جمع کرانے کا حکم دے دیا۔ چیف جسٹس پاکستان نے ریمارکس دیئے کہ معقول فیسوں کا تعین کریں گے۔ سکولوں کا آڈٹ اور مالکان کے ٹیکس ریٹرن بھی دیکھیں گے۔

تفصیلات کے مطابق چیف جسٹس پاکستان کی سربراہی میں تین رکنی بینچ نے نجی سکولوں کی فیسوں میں اضافے کے خلاف والدین کی درخواستوں پر سماعت کی۔ سپریم کورٹ نے نجی سکولوں کو آڈٹ اکاؤنٹس جمع کرانے کی ہدایت کردی۔ چیف جسٹس نے پرائیوٹ سکول مالکان سے مکالمے کے دوران کہا کہ آپ اپنی مرضی کی فیس چارج کر رہے ہیں اور کہتے ہیں آپ کا رائٹ ٹو ٹریڈ ہے، آپ تعلیم بیچ رہے ہیں۔ پرائیوٹ سکول کے وکیل شہزاد الہیٰ کے مسکرانے پر چیف جسٹس نے کہا یہ مسکرانے کی بات نہیں، اتنی فیس نہ لیں کہ بچے تعلیم جاری نہ رکھ سکیں۔ والدین کے وکیل نے کہا کہ سکول والے کہتے ہیں منافع کم بچتا ہے لیکن برانچیں بڑھ رہی ہیں جس پر چیف جسٹس نے کہا یہ معاملہ ہے تو اسکولوں کا آڈٹ کرا لیتے ہیں کہ منافع میں ہیں یا خسارے میں۔

چیف جسٹس نے نجی سکول مالکان کو کہا آپ تعلیم کے قومی جذبہ سے ہٹ کر کمائی کے چکر میں پڑ گئے ہیں اور سرکاری اور نجی سکولوں میں بہت گیپ پیدا کر دیا ہے۔ چاہتا تھا سب کی ایک کتاب، ایک بستہ اور ایک یونیفارم ہو لیکن نہیں کر سکا۔ چیف جسٹس نے ریمارکس دیئے کہ بڑے بڑے ممی ڈیڈی اسکولوں میں بچوں کو منشیات دی جا رہی ہے۔ عدالت نے کیس کی مزید سماعت دو ہفتے کے لیے ملتوی کردی۔

حارث افضل  1 ماه پہلے

متعلقہ خبریں