کراچی میں ٹارگٹ کلنگ کا عفریت کئی زندگیاں نگل گیا

بلال خان

کراچی میں ٹارگٹ کلنگ کا عفریت، کئی زندگیاں نگل گیا، سابق رکن قومی اسمبلی علی رضا عابدی، پی ایس پی رہنما عبدالحبیب ٹارگٹ کلنگ کا نشانہ بنے۔ پی ایس پی اور متحدہ کے دفاتر پر حملے سمیت 2کارکنوں کو فائرنگ کر کے قتل کر دیا گیا۔ پچھلے برس بھی متعدد افراد لقمہ اجل بنے۔

 کراچی میں ٹارگٹ کلرپھرسراٹھانے لگے۔ گزشتہ سال کے ماہ دسمبرکی 9 تاریخ سے شہرمیں ٹارگٹ کلنگ کاسوئچ آن ہوا۔ 9 دسمبر کو گلستان جوہر میں ایم کیو ایم کے میلاد میں دھماکے کے دوران چھ افراد کو زخمی ہوئے۔ 23 دسمبرکی رات رضویہ میں قاتلوں نے پی ایس پی کے دفترپرگولیاں برسائیں جس میں اظہراور نعیم جاں بحق اور دوافرادزخمی ہوئے۔ پچیس دسمبر کی رات ڈیفنس کے علاقے میں گھر کے باہر سابق رکن قومی اسمبلی علی رضا عابدی کو فائرنگ کر کے قتل کر دیا گیا۔

21جنوری کی صبح گارڈن میں ڈیوٹی پرجانے والا ٹریفک پولیس اہلکاراحتشام شہید کردیا گیا، اسی واقعے کے اگلے روزفیروزآباد میں سورج ڈھلنے سے قبل دہشت گردوں نے کلٹس گاڑی پرنشانہ بنایااورکے ڈی اے افسرمحمد علی شاہ کوموت کے گھاٹ اتارا۔

جنوری کے بعدماہ فروری کاآغازہواتو قاتل مزید سرگرم ہوگئے، 10 فروری کوپاپوش علاقے میں کارپرفائرنگ سے پی ٹی آئی کے رکن قومی اسمبلی عتیق تالپوربال بال بچے، اگلے روز قاتلوں نے نیوکراچی کارخ کیا اوریوسی 6 کے دفتر پر گولیاں برسائیں۔

 فائرنگ سے ایم کیوایم کارکن شکیل ہلاک اور اعظم زخمی ہوا، واقع کے تین روزبھی نہ گرزے تھے کہ 14 فروری کو قاتلوں نے سائٹ ایریااور اورنگی ٹاؤن میں فائرنگ کرکے پی ٹی آئی کے کارکن شفقت اور عبدلرحمان کوقتل کر دیا۔

گزشتہ شب سخی حسن سرینہ موبائیل مارکیٹ کے قرب نامعلوم موٹر سائیکل سوار ملزمان نے گاڑی پر فائرنگ کر کے فرار ہوگئے فائرنگ کے نتیجے میں پی ایس پی رہنما اور عام انتخابات میں حصہ لینے والے عبدالحسیب جان بحق ہو گئے۔

 پولیس حکام کے مطابق قتل کی تمام وارداتوں میں نائن ایم ایم، ایس ایم جی استعمال کی گئی، جبکہ گارڈ ن میں شہید پولیس اہلکارکو30 بورپستول سے دوگولیاں ماری گئیں، پولیس حکام کے بڑے بڑے دوعوں کے بعدقتل کی کسی بھی واردات کاکوئی قاتل قانون کی گرفت میں نہ آ سکا۔

احمد علی کیف  1 ماه پہلے

متعلقہ خبریں