9جنوری: پاکستان فلم انڈسٹری کے 'سلطان' راہی کی برسی

 

لاہور(مرزا رمضان بیگ) پاکستانی فلم انڈسٹری کے نامور اداکار سلطان راہی کی آج 23ویں برسی منائی جارہی ہے، جنہیں گوجرانوالہ میں بیدردی سے قتل کر دیا گیا، لیکن آج تک ان کے قاتلوں کا سراغ نہ ملنا محکمہ پولیس کی ناکامی کا منہ بولتا ثبوت ہے۔

 

پنجابی فلموں کے لیجنڈ اداکار سلطان راہی کو نو جنوری انیس سو چھیانوے کو گوجرانوالہ میں نامعلوم افراد نے فائرنگ کر کے قتل کر دیا، لیکن آج تک ان کے قاتل بے نقاب نہ ہو سکے۔ اپنے فلمی کیرئرکے عروج پر سلطان راہی اپنے لاکھوں مداحوں کوسوگوارچھوڑگئے۔سلطان راہی کے قتل کے خلاف ان کے ساتھی فنکاروں کی احتجاجی تحریک چلانے پر ساجد نامی ملزم کو گرفتار کیا گیا۔

 

 

پولیس نے ساجد نامی شخص کو سلطان راہی کا قاتل قرار دیتے ہوئے پولیس مقابلے میں مار دیا، لیکن کچھ ہی عرصہ بعد پولیس کی اس کارروائی کا پول کھل گیا۔ جب شیخوپورہ پولیس کی حراست میں موجود یوسف نامی ملزم نے سلطان راہی کے قتل کا انکشاف کیا، مگر پولیس کی روائتی سستی اور ناقص تفتیش کے باعث عدالت نے یوسف کو بھی رہا کر دیا۔

 

سلطان راہی کے لواحقین اور مداح آج بھی ان کے قاتلوں کے بے نقاب ہونے کے منتظرہیں، لیکن ارباب اختیار کو اس جیسے اور ہزاروں اندھے قتلوں کی تفتیش سے کوئی غرض نہیں۔

عطاء سبحانی  7 ماه پہلے

متعلقہ خبریں