دنیا کی مہنگی ترین  دوا تیار، ایک خوراک کی قیمت 30 کروڑ روپے

پبلک نیوز: دنیا کی مہنگی ترین دوائی 'زولجینسما' جس کی ایک خوراک کی قیمت 20 لاکھ ڈالر سے بھی زیادہ ہے جو کہ تقریبا پاکستانی 30 کروڑ روپے سے زیادہ ہے۔

 

تفصیلات کے مطابق 'زولجینسما' نام کی دوا جس کی ایک خوراک کی قیمت 20 لاکھ ڈالر سے بھی زیادہ ہے جو کہ تقریبا پاکستانی 30 کروڑ روپے سے زیادہ ہے۔

زولجینسما دوا کو امریکن کمپنی  نووارٹس نے تیار کیا ہے جو کہ ایک مخصوص جنسیاتی مرض 'اسپائنل مسکیولر ایڑوفی' جسے ایس ایم اے سے بھی جانا جاتا ہے کے علاج میں بہت کارآمد ثابت ہوتی ہے۔ تفصیلات کے مطابق صرف امریکہ میں ہی ایک سال کے دوران 500 کے قریب شیرخوار بچے اس مرض کے ساتھ پیدا ہوتے ہے۔

واضح رہے کہ یہ دوا صرف دو سال سے یا اس سے کم عمر بچے کو دی جاتی ہے اور ایک گھنٹے کے دوران اس دوا کی خوراک جسم میں داخل کی جاتی ہے۔ کمپنی کے مالکان کا کہنا ہے کہ یہ دوا اگلے ماہ فروخت کے لیے مارکٹ میں دی جائے گی۔

'اسپائنل مسکیولر ایڑوفی' مرض ایک خراب جین کی وجہ سے بچے پر اثر انداز ہوتا ہے جس کی وجہ ہے بچے میں کھانے کی محتاجی، پٹھوں، عضلات کی کمزوری اور سانس لینے میں دشواری رہتی ہے۔ یہ بیماری ریڑھ کی ہڈی پر حملہ کرتی ہے اور تقریبا 90 فیصد بچے صرف دو سال کی عمر میں اپنی زندگی سے ہاتھ دھو بیٹھتے ہے اور جو بچنے میں کامیاب ہو جاتے ہے وہ اپنی زندگی کے باقی ایام مفلوجی اور اپاہجی کے سائے تلے گزارتے ہے۔

یہ دوا اتنی مہنگی ہے کہ دوا ساز کمپنی نے اس کو عوام تک رسائی دینے کے لیے پانچ سال کی اقساط میں تقسیم کر دیا ہے۔ پہلے مرحلہ میں کمپنی کو 7 لاکھ 50 ہزار ڈالر ادا کرنے ہے اور آنے والے ہر سال 3 لاکھ ڈالر کمپنی کو ادا کرنے ہے۔

حارث افضل  2 ماه پہلے

متعلقہ خبریں