بنگلا دیش، پاکستان اوربھارت سے امیر ملک بن گیا

ڈھاکا(ویب ڈیسک) بنگلا دیش کی معیشت پاکستان اور بھارت کے مقابلے میں زیادہ مستحکم ہو چکی ہے. یہ معاشی صورتحال بلومبرگ میں چھپنے والے آرٹیکل کے مطابق فی کس جی ڈی پی کے لحاظ سے جانچی گئی ہے.

اس ماہ بنگلا دیش کی کابینہ کے سیکریٹری نے صحافیوں کو بتایا کہ گذشتہ سال کے دوران جی ڈی پی میں فی کس 9 فیصد اضافہ ہوا ہے ، جو بڑھ کر 2،227 ڈالرز تک پہنچ گیا ہے۔ اس دوران پاکستان کی فی کس آمدنی $ 1،543 ہے۔ 1971 میں پاکستان بنگلا دیش سے 70 فیصد امیر تھا تاہم آج بنگلا دیش پاکستان سے 45٪ امیر ہے۔ ایک پاکستانی ماہر معاشیات نے نشاندہی کی کہ “یہ امکان کے دائرے میں ہے کہ ہم 2030 میں بنگلہ دیش سے امداد حاصل کرسکیں گے۔”

ہندوستان کو اس بات پر اعتماد ہے کہ واحد جنوبی ایشین معیشت ہے جو دنیا میں اہمیت کی حامل ہے- تاہم اب اسے اس حقیقت سے دوچار ہونا چاہئے کہ وہ بھی فی کس آمدنی کے لحاظ سے بنگلہ دیش سے غریب ہے۔ 2020-21 میں ہندوستان کی فی کس آمدنی صرف $ 1،947 تھی۔

بنگلہ دیش کی نمو تین ستونوں پر منحصر ہے: برآمدات ، معاشرتی ترقی اور مالی حکمت عملی۔ 2011 اور 2019 کے درمیان بنگلہ دیش کی برآمدات میں ہر سال 8.6 فیصد اضافہ ہوا۔ کامیابی کی بڑی وجہ ملبوسات جیسی مصنوعات پر لگاتار توجہ مرکوز کرنا ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں