سیاسی تصفیہ افغان مسئلہ کے حل کا بہترین راستہ ہے

پبلک نیوز: وزیراعظم عمران خان نے قطر کے امیر، سعودی عرب کے ولی عہد اور ابوظہبی کے ولی عہد سے ٹیلی فون پر رابطہ کیا ہے۔ اس دوران باہمی دلچسپی کے امور اور افغانستان کی تازہ ترین صورتحال پر تبادلہ خیال کیا گیا۔

تفصیلات کے مطابق وزیراعظم عمران خان اور ابوظہبی کے ولی عہد محمد بن زاید کے مابین ٹیلی فون پر رابطہ ہوا۔ دونون رہنماوں کا عالمی اور علاقائی صورتحال پر بھی تبادلہ خیال کیا۔

وزیر اعظم نے کہا کہ پرامن اور مستحکم افغانستان ہی پاکستان سمیت پورے خطے کے اہم مفاد میں ہے۔ سیاسی تصفیہ افغان عوام کے حقوق کے تحفظ کو یقینی بنانے کا بہترین راستہ ہے۔ عالمی برادری کو افغان عوام کی معاشی مدد کرنی چاہئے۔

ان کا کہنا تھا کہ افغانستان کی تعمیر نو میں بھی عالمی برادری کی معاونت ہونی چاہئے۔ پاکستان متحدہ عرب امارات کے ساتھ مضبوط برادرانہ تعلقات کو اہمیت دیتا ہے۔ اس وقت افغانستان کے معاشی استحکام کو یقینی بنانے کی ضرورت ہے۔ دونوں ممالک کے درمیان قریبی تعاون کو مزیر فروغ ملے گا۔

وزیراعظم نے ایکسپوکے لیے بہترین انتظامات کرنے پر ولی عہد کو مبارکباد دی۔ وزیراعظم نے میگا ایونٹ کی شاندار کامیابی کے لیے نیک خواہشات کا اظہار کیا۔ وزیراعظم اور ولی عہد نے مشترکہ مفادات کے شعبوں میں تعاون بڑھانے اور مل کر کام کرنے پر اتفاق کیا

بعد ازاں وزیراعظم عمران خان اور سعودی ولی عہد محمد بن سلمان کے درمیان ٹیلی فونک رابطہ ہوا۔ جس میں دونوں رہنماؤں کا دو طرفہ تعلقات اور افغانستان کی صورتحال پر تبادلہ خیال کیا۔ وزیراعظم عمران خان نے سعودی فرمانروا سلمان بن عبدالعزیز کے لیے نیک خواہشات کا اظہار کیا۔

وزیراعظم نے سعودی خود مختاری اور علاقائی سالمیت کی حمایت کے عزم کا اظہار کیا اکتوبر میں مشرق وسطیٰ گرین منصوبہ کے لیے دعوت نامے پر سعودی ولی عہد کا شکریہ کیا۔ دونوں رہنماؤں نے افغانستان کی موجودہ صورتحال پر تفصیلی گفتگو کی۔

علاوہ ازیں وزیراعظم عمران خان نے امیر قطر شیخ تمیم بن حمد الثانی سے بھی ٹیلی فونک رابطہ کیا۔ وزیراعظم نے قطر کے ساتھ سیاسی اور اقتصادی شراکت داری کو مستحکم کرنے کا عزم کیا۔ کورونا کی وباء کے دوران قطر کی جانب سے پاکستان کی مدد پر اظہار تشکر کیا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں